ٹمبر مارکیٹ میں چھاپہ، فوڈ فیکٹری سے امدادی چینی برآمد، ملزم گرفتار 

ٹمبر مارکیٹ میں چھاپہ، فوڈ فیکٹری سے امدادی چینی برآمد، ملزم گرفتار 

  

 ملتان (سٹی رپوٹر،   وقائع نگار)   ملتان ضلعی انتظامیہ نے سرکاری چینی خورد برد مافیا کے آگے ہتھیار ڈال دئیے۔ سرکاری چینی کی غائب  کرنے کا ایک اور سکینڈل سامنے آگیا۔مقامی پولیس نے گرفتار  ملزم سمیت دو افراد پر مقدمہ درج کرلیا ہے۔جبکہ ضلعی انتظامیہ(بقیہ نمبر53صفحہ7پر)

 نے ٹمبر مارکیٹ میں فوڈ فیکٹری کو سرکاری چینی برآمد ہونے پر سیل کردیا۔تفصیل کے مطابق اسسٹنٹ کمشنر سٹی خواجہ عمیر محمود نے گزشتہ روز ایک اطلاع پر ٹمبر مارکیٹ کے علاقے میں واقع احسن فوڈز فیکٹری پر چھاپہ مارا۔جہاں سے  دوران تلاشی  125 بوری سرکاری چینی برآمد کی۔اور وہاں سے ایک ملزم سعید احمد کو گرفتار کیا گیا۔جن کے خلاف پولیس تھانہ قطب پور نے ضلعی انتظامیہ کے استغاثہ پر قانونی کارروائی شروع کردی۔اس موقع پر اسسٹنٹ کمشنر سٹی خواجہ عمیر محمود نے بتایا کہ چھاپے کے دوران احسن فوڈ فیکٹری کی جانب سے 350 بوری سرکاری چینی مخلتف فوڈ آئٹمز کی تیاری میں استعمال کرنے کا بھی انکشاف ہوا ہے۔چینی سپلائی کرنے والے ڈیلر کو بھی ٹریس کیا جارہا ہے جس کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔انہوں نے کہا کہ سرکاری چینی کا ایک ایک دانہ شہریوں کی امانت ہے۔سرکاری چینی 90 روپے فی کلو کے حساب سے شہر کے تمام مقامات پر سرکاری چینی وافر مقدار میں دستیاب ہے۔واضح رہے ایک ہفتہ قبل بھی ملتان سے ایس ایم فوڈ کے فیکٹری سے سات سو سے زائد سرکاری چینی کی بوریاں برآمد ہوئیں تھیں۔جس پر ضلعی انتظامیہ نے مالک کے نام کا نام مقدمہ میں درج کرنے کی بجائے دیگر چار افراد پر دو الگ الگ مقدمات درج کیئے گئے تھے۔ذرائع کے مطابق ملتان میں مسلسل سرکاری چینی کی نجی فیکٹریوں سے برآمدگی نے انکی کارکردگی پر سوالیہ نشان لگا دیئے ہیں۔جس سے یہ بھی ظاہر ہوتا ہے کہ ضلعی انتظامیہ سرکاری چینی خورد برد مافیا کے آگے بے بس نظر آرہی ہے۔اور اس طرح حکومت کو بھاری نقصان کا سامنے ہے

سرکاری چینی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -