ٹانک،جنوبی وزیر ستان اراضی تنازعہ پر فائرنگ،1 جاں بحق،3 یرغمال

  ٹانک،جنوبی وزیر ستان اراضی تنازعہ پر فائرنگ،1 جاں بحق،3 یرغمال

  

ٹانک(نمائندہ خصوصی)جنوبی وزیرستان: کرکنڑہ زمین تنازعے پر خونریز جھڑپ ایک جان بحق جبکہ وزیر قبائل کے تین افراد کو یرغمال بنا لیا گیا ہے، ضلعی انتظامیہ کی نااہلی کے باعث علاقے میں حکومتی عملداری ختم ہو کر رہ گئی ہے، مزید خون خرابے کا امکان تفصیلات کے مطابق جنوبی وزیرستان سب ڈویژن وانا کے علاقہ کرکنڑہ میں دوتانی قبائل سے تعلق رکھنے والے عمائدین بذریعہ موٹر کار ٹانک کی جانب جارہے تھے کہ راستے میں کچھ مسلح افراد نے ان پھر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں ایک شخص احمد نبی موقع پر جاں بحق ہوئے جبکہ گاڑی میں سوار مرد اور خواتین نے قریبی ایف سی چیک پوسٹ میں پناہ لے لی، مبینہ طور پر دوتانی قبائل مذکورہ واردات کا الزام وزیر زلی خیل قبائل پر لگا رہے ہیں جس کے بعد دوتانی قبائل نے جوابی کارروائی کرکے توئی خلہ میں وزیر قبائل کے تین افراد کو گاڑی سمیت یرغمال بنا لیا ہے، جس کے بعد دونوں فریقین کے مابین حالات انتہائی کشیدہ ہوگئے اور وزیر قبائل نے 800 افراد پر مشتمل مسلح لشکر تشکیل دیکر متنازعہ علاقے کے پہاڑوں پر مورچہ زن کر دیاہے، جس سے مزید خون خرابے کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے، واضح رہے کہ زلی خیل قبائل اور دوتانی قبائل کے مابین کرکنڑہ کے جائداد پر گزشتہ کئی سالوں سے خونریز جھڑپوں کا سلسلہ چلا آرہا ہے جس میں ابھی تک درجنوں افراد جاں بحق آور زخمی ہو چکے ہیں، لیکن نااہل ضلعی انتظامیہ دونوں فریقین کے مابین جاری جھڑپوں کو ختم کرنے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے جس کے باعث علاقے میں حکومت کی عملداری کا کوئی وجود نظر نہیں آرہا اور علاقے میں وار لرڈز کی بادشاہت قائم ہوچکی ہے

مزید :

صفحہ آخر -