عمران خان  اور ”مٹی ڈالو“کا نظریہ

      عمران خان  اور ”مٹی ڈالو“کا نظریہ
      عمران خان  اور ”مٹی ڈالو“کا نظریہ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 عمومی قیاس یہی ہے کہ دانش وحکمت کا خزانہ صرف بزرگوں کے پاس ہوتا ہے لیکن زمانہ بہت تیزی سے تبدیل ہورہا ہے۔ دانش وحکمت کے اوزان اور ترازو بھی بدل گئے ہیں۔ رائج الوقت نظریہ یہ ہے کہ جس طرح عمرِگریزاں کے ساتھ ساتھ چہرے پر جھرّیاں پڑنے لگتی ہیں، ابرُؤں کے بال موٹے، سفید، گھنے اور بھاری ہوکر، ڈھیلے ڈھالے لٹکے ہوئے پپوٹوں سے گلے ملنے لگتے ہیں، دانت اپنی جڑیں چھوڑ دیتے ہیں، ہاتھوں میں رعشہ آجاتا ہے اور گفتگو کا بہاؤ تھکے ہارے انجن کی طرح جھٹکے کھانے لگتا ہے، اسی طرح مردِبزرگ کی دانش بھی سنولا سی جاتی ہے۔ وہ عصرِحاضر کے مَرض کی تشخیص نہیں کرسکتا۔ کربھی لے تو اپنی اُدھڑی ہوئی میل خوردہ زنبیل سے پُرانے صَدری نسخے نکال کر مسیحائی کی کوشش کرتا ہے۔ نتیجہ یہ کہ مَرض اور مریض دونوں ہنس کر منہ دوسری طرف پھیر لیتے ہیں۔ 

اقبال نے کہا تھا……”جوانوں کو پیروں کا اُستاد کر“__  اس لئے میں خود کو وقت سے ہم آہنگ رکھنے کے لئے جوانوں کی تحریریں بڑی توجہ سے پڑھتا اور اُن کی فکرِتازہ کا مصفّیٰ پانی اپنی دانشِ پژمُردہ پر چھڑکتا رہتا ہوں جس طرح گُل فروش مرجھائے پھولوں پر مسلسل پانی کا چھڑکاؤ کرتے رہتے ہیں۔ 

کچھ دِن قبل میں نے عزیزی یاسر پیرزادہ کا کالم پڑھا۔ اُس نے آج کے مقبول موضوع ”صلح صفائی“ کو ذرا مختلف اور منفرد زاویئے سے دیکھا ہے۔ موجودہ ملکی صورت حال کے تناظر میں بزرگانِ دانش وحکمت دُہائی دے رہے ہیں کہ ”سب ایک ہوجائیں، بھلا دیں ماضی کو، صاف کرلیں اپنے دل اور دماغ، دھوڈالیں سب کدورتیں، معاف کردیں ایک دوسرے کو، گلے لگ جائیں، یک دل، یک جان، یک زبان ہو جائیں …… ”تقاضا یہ ہے کہ عمران خان سادہ و معصوم شخص ہے۔ بھولپن میں کچھ ناگفتنی باتیں بھی کہہ جاتا ہے۔ 9 مئی کو جو کچھ ہوا، بہت بُرا ہو۔ ہم اُس کی شدید مذمت کرتے ہیں لیکن اب ہوگیا جو ہونا تھا۔ مٹی ڈالیں اس پر۔ دل بڑا کریں اور معاف کردیں ……“

یاسر کے کالم کا مفہوم یہ تھا کہ دانشورانِ عصرِ حاضر غلط آدمی (نوازشریف) سے مخاطب ہیں۔ حالات کو اعتدال پرلانے، متعفن روایات پر مٹی ڈالنے اور ایک نئے عہد کا عہدنامہ رقم کرنے کی ذمہ داری نوازشریف نہیں، عمران خان کے کندھوں پر ہے۔ اگر وہ آج بھی 9 مئی کو اپنی ٹوپی میں سُرخاب کا پَر سمجھتے ہیں اور اُسی نظریے کا پرچم تھامے سیاست میں واپس آنا چاہتے ہیں تو صلح صفائی کیسے ہو؟ کس سے ہو؟

 عمران خان کا متحرک سیاسی سفر 1999 کی فوجی بغاوت کے بعد جنرل پرویز مشرف کے دستِ آمریت پر بیعت سے شروع ہوا۔ 

2011ء میں جنرل شجاع پاشا کی برکھا، تحریکِ انصاف کے سوکھے دھانوں پہ برسی اورفصل چھاؤنیوں کی چھاؤں تلے پروان چڑھنے لگی۔ 2018؁ کے انتخابات میں بدترین دھاندلی کے ذریعے دیرینہ خواب، تعبیر کو پہنچا۔ کامل چار برس عمران خان نے سیاسی فراست، کشادہ ظرفی اور افہام وتفہیم کا ادنیٰ سا مظاہرہ بھی نہیں کیا۔ اپوزیشن لیڈر سے ہاتھ تک نہ ملایا۔ قومی سلامتی کے انتہائی حساس اجلاس ہوئے۔ پوری فوجی قیادت نے شرکت کی۔ وزیراعظم کسی اجلاس میں شریک نہ ہوئے۔ دلیل یہ کہ میں ”چوروں“ سے ہاتھ نہیں ملا سکتا۔ سو وہ اپوزیشن کو بازاری گالیاں دینے، زندانوں میں ڈالنے، اُن کے پنکھے اتروانے اور الزامات تھوپنے ہی کو کمال فن سمجھتے رہے۔  

اب سپریم کورٹ نے بھی کہہ دیا ہے کہ عمران خان نے عدم اعتماد کی تحریک کے بعد سیاسی ہیجان پیدا کرنے کی کوشش کی۔ غیرآئینی طور پر قومی اسمبلی توڑنے کا مشورہ دیا۔ صدر علوی نے غیر آئینی طورپر اسمبلی توڑی جو غداری کے مترادف ہے۔ عمران خان اور صدر علوی کے اسی ہیجانی، جذباتی اور غیرآئینی ردّعمل سے عدم استحکام، پیچ درپیچ بحرانوں اور انتخابات میں تاخیر کا وہ سلسلہ شروع ہوا جس کا ارتعاشِ مابعد (After Shocks) آج تک محسوس کیا جارہا ہے۔ اگر وہ بھاری بھرکم اپوزیشن کی قیادت کرتے ہوئے قومی اسمبلی میں موجود رہتے تو اپنی مخصوص شعلہ بیانی سے صرف تین ارکان کی اکثریت رکھنے والی پندرہ جماعتی مخلوط حکومت کو تگنی کا ناچ نچاسکتے تھے۔ انتخابات مقررّہ وقت، نومبر2023 میں ہوتے اور عمران خان اڈیالہ جیل میں ہونے کے بجائے بہ اندازِ دگر انتخابی مہم کی قیادت کررہے ہوتے۔ 

ایک اور موقع اُنہیں محرومیئِ اقتدار کے صرف ایک ماہ بعد، مئی 2022 میں ملا۔ پی۔ڈی۔ایم نے حکومت سنبھالتے ہی جب معیشت کی غارت گری اور بڑی حد تک ناقابلِ اصلاح صورتِ حال دیکھی تو فیصلہ کرلیا کہ اپنی سیاسی جمع پونجی داؤ پر لگانے کے بجائے فوری طورپر انتخابات میں چلے جانا چاہیے۔صدر عارف علوی اور جنرل باجوہ کے ذریعے عمران خان کو باضابطہ طورپر اس فیصلے سے آگاہ کردیا گیا۔ وہ نہ مانے۔ کہا کہ ”میں 25 مئی کو لاکھوں عوام کے ساتھ اسلام آباد جارہا ہوں۔ حکومت بھی الٹوں گا اور الیکشن کی تاریخ بھی لے کر اٹھوں گا۔“ یہ کہانی پرویز خٹک بھی سناچکے ہیں۔ عمران خان لانگ مارچ سے نہ ٹلے تو سب سے پہلے نوازشریف نے وزیراعظم شہبازشریف کو پیغام دیا کہ اب کسی کی دھونس میں آنے کی ضرورت نہیں۔ حالات کا سامنا کریں۔ ملک کو ابتری سے نکالنے کی ہر ممکن کوشش کریں اور اسمبلی کو اپنی معیاد پوری کرنے دیں۔ تمام جماعتوں نے اس کی تائید کی۔ بے لچک ضد نے خان صاحب کو پیچھے دھکیل دیا۔ ذرا  اِس شیش ناگی انا اور طفلانہ ہٹ دھرمی کے کرشموں پر نظر ڈالئے۔ قومی اسمبلی سے استعفے دئیے کہ الیکشن مل جائیں گے۔ نہ ملے۔ آرمی چیف کی تعیناتی سے دو  دِن پہلے راولپنڈی پر چڑھائی کی کہ سید عاصم منیر کی تقرری روکی جائے۔ ناکام رہے۔ افتادِ طبع کو چین نہ ملا تو پنجاب اسمبلی توڑ دی کہ اب تو الیکشن ناگزیر ہیں۔ ایسا نہ ہوا۔ جھنجھلا کر خیبرپختون خوا اسمبلی توڑ ڈالی۔ انتخابات پھر بھی نہ ملے۔ زِچ ہوکر فوج میں بغاوت اور عاصم منیر کا تختہ الٹنے کی سازش کی۔ سازش کے فلیتے کو آگ دکھانے کے لئے 9 مئی کو ملک گیر غارت گری کا منصوبہ بنایا اور خان صاحب وہاں پہنچ گئے جہاں ہر شعلہ مزاج، انا پرست اور بے حکمت شخص کو جلد یا بدیر پہنچنا ہی ہوتا ہے۔ 

”مٹی ڈالو“کے مبلّغین پر ایک بنیادی سوال کا جواب لازم ہے۔ کیا  9 مئی کی نشانہ بند تباہ کاری، فوج کے اندر بغاوت اور آرمی چیف کا تختہ الٹنے کی سازش کو معصومانہ بھول چُوک اور جمہوری احتجاج کا بنیادی حق قرار دے کر ”عفو ودرگذر“ کی ریشمی قبا پہنا دی جائے؟ کیا خان صاحب نے کوئی ایک بھی مثبت اشارا دیا ہے کہ وہ ماضی پر لکیر پھیر کر ایک نئے آغاز کی خاطر ”چوروں اور ڈاکوؤں“ سے ہاتھ ملانے اور مل بیٹھنے کو تیار ہیں؟ خان صاحب کی طرف سے کسی باضابطہ ”وکالت نامے“ کے بغیر بزرگانِ دانش وحکمت کی طرف سے ”سب گلے مل جائیں“ کی رومانوی صدائیں، صدا بہ صحرا نہیں تو کیا ہیں؟ آج بھی عمران خان روزن زنداں سے آنکھ لگائے بیٹھے ہیں کہ جنرل پاشا، جنرل ظہیر الاسلام، جنرل فیض حمید اور جنرل باجوہ جیسا کوئی کرشمانی جنّاتی کردار، کوہ قاف کی بلندیوں سے اترے اور انہیں آغوش میں لے کر وزیراعظم ہاؤس کے پنگھوڑے میں ڈال دے۔ اب یہ ممکن نہیں رہا۔ بے حکمتی کے باعث انہوں نے اپنے جمہوری انتخابی راستے میں خود ہی گہری کھائیاں کھود دی ہیں اور اہلِ کوہ قاف زندگی کا سب سے بڑا سبق سیکھ چکے ہیں۔ 

اور آخری بات ……! کیا  9 مئی کی کھُلی بغاوت کے بعد عمران خان کے پاس یہ گنجائش موجود ہے کہ ایک رسمی سے ”حرف معذرت“ یا ”گلے لگ جانے“ کی آرزو کے بعد وہ معمول کی جمہوری سیاست کی طرف پلٹ آئیں؟ 

مزید :

رائے -کالم -