چہار سمت نظر   میں ہے دشت  اور سراب۔۔۔

چہار سمت نظر   میں ہے دشت  اور سراب۔۔۔
چہار سمت نظر   میں ہے دشت  اور سراب۔۔۔

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 نحیف  جسم  ہے  تن   پر   لباس  کوئی   نہیں
مجھ ایسے دشت میں اب کے اداس کوئی نہیں

چہار  سمت  نظر   میں  ہے   دشت  اور  سراب
یہ  وہ  جگہ  ہے  جہاں آس  پاس  کوئی   نہیں 

اٹھا    دیا    ہے    تری     یاد     نے    وہ   سناٹا
میں چیخ اٹھا کہ مجھ میں حواس کوئی نہیں

میں  دیکھتا  ہوں تری  رنگ  بازیاں  جس  میں
حواس    کوئی   نہیں   بدحواس  کوئی    نہیں

ہیں   سبز    باغ     چہکتے    پرند    اور    غزال
ندیم    اور   مرا     غم    شناس    کوئی    نہیں

کلام :ندیم ملک 

مزید :

شاعری -