برطانوی تاریخ میں منشیات کا سب سے بڑا کیس، 17 ٹائی کون 232سال برطانوی جیل میں رہیں گے

برطانوی تاریخ میں منشیات کا سب سے بڑا کیس، 17 ٹائی کون 232سال برطانوی جیل میں ...
برطانوی تاریخ میں منشیات کا سب سے بڑا کیس، 17 ٹائی کون 232سال برطانوی جیل میں رہیں گے

  

 لندن (مرزا نعیم الرحمان )برمنگھم کراﺅن کورٹ نے برطانیہ کی تاریخ میں منشیات سے سب سے بڑے مقدمے میں 19پاکستانیوں کو مجموعی طور پر 232سال قیدبامشقت کی سزا کا حکم سنا دیا ہے۔ پاکستانی نژاد برطانوی شہری طویل عرصہ سے پاکستانی مشہور برانڈکے مصالحہ جات کے پیکٹوں میں ہیروئن سمگل کر رہے تھے پاکستانی نژاد بر47 سالہ طانوی شہری محمد فاروق کے ظہیر علی ‘ صفدر نواز‘ اور فاروق اور اس کی بیوی کیترھائن پر مشمل گروہ کو ان کے وئیر ہاﺅس سے 263کلو گرام ہیروئن سمیت رنگے ہاتھوں گرفتار کیا گیا تھا اور انکشاف ہوا تھا کہ یہ گینگ اسلام آباد سے لیڈیز ‘ بریڈ فورڈ ائیر پورٹ پر پی آئی اے کے طیارے کے ذریعے منشیات اسمگل کرتا ہے ۔ اس گروہ سے ایک ٹن سے زائد ہیروئن برآمد کی گئی تھی جس کی مالیت 306ملین پاﺅنڈتھی ۔عدالت نے محمد فاروق کو 29سال قید جبکہ اسکی بیوی کیتھرائن کو منی لانڈرنگ کے الزام میں جیل بجھوا دیا۔ مہربان حسین ‘ ندیم اسلم ‘ ماجندہ ٹیتھی، صفدر نواز محمد خان ، محمد نصیر، ظہیر علی سکنہ برمنگھم ، اختر سیف الدین ، اسد شانل، نعیم سکنہ لیسٹر، دلاور احمد ذکی سکنہ بریڈ فورڈ ،علی عبد اللہ سکنہ لیڈیز ، محمد راج ،عبد النیازی سکنہ لندن، احمد شاہ عمرل، ہمایوں کو 54/54سال قید بامشقت کی سزا کا حکم سنایا ۔ تمام ملزمان کو برطانیہ کی سب سے سخت ترین نگرانی والی جیل میں بجھوا دیا گیا ہے۔ کراﺅن کورٹ برمنگھم کی طرف سے سنائی جانیوالی 232سال کی یہ اجتماعی سزا سب سے بڑی سزا تصور کی جا رہی ہے۔ اس تمام کیس کو پولیس نے کراﺅن کورٹ کے فیصلہ تک انتہائی خفیہ رکھا اور فیصلے کے بعد سب سے بڑی خبر کے طور پر پیش کیا ۔ برطانیہ میں مقیم پاکستانی کیمونٹی نے منشیات کے ان بڑے سمگلروں کو پاکستان کیلئے ایک سیاہ دھبہ قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ یہ وہ لوگ ہیں جو ہوس زر میں مبتلا ہو کر برطانیہ میں مقیم پاکستانی نژاد برطانوی شہریوں کو بدنام کر رہے ہیں ان کیلئے 232سال کی سزا بھی کم ہے ۔

مزید : بین الاقوامی