سی پیک کی مخالف قوتیں

سی پیک کی مخالف قوتیں
 سی پیک کی مخالف قوتیں

  

پاکستان کے دشمن اس بات سے بخوبی آگاہ ہیں کہ سی پیک کی تکمیل پاکستان کو بے پناہ معاشی استحکام بخشے گی اور اپنی مضبوط معیشت کی بدولت پاکستان ایشین ٹائیگر کے روپ میں ابھرے گا۔ سی پیکسے معاشی سرگرمیوں میں قابلِ دید اضافہ ہو گا۔ روزگار کے نئے دروازے کھلیں گے اور پاکستان روزگار کے حوالے سے ایک پُرکشش مُلک بن جائے گا۔ پاکستان سے صنعتی ماہرین اور ٹیلنٹ کے انخلا کی روک تھام ہو گی اور پاکستان معاشی طور پر خود کفیل ہو گا اور یہ معاشی استحکام پاکستان کو بین الاقوامی مالیاتی اداروں کی گرفت سے ہمیشہ کے لئے آزاد کر دے گا۔ سی پیک کے اثرات صرف معیشت تک ہی محدود نہیں رہیں گے،بلکہ یہ پاکستان میں سیاسی نظام کو تقویت بخشے گا۔ معاشی خود کفالت کی بدولت پاکستان کسی غیر ملکی قوت سے ڈکٹیشننہیں لے گا اور جمہوریت حقیقی معنوں میں پروان چڑھے گا۔عسکری اعتبار سے پاکستان کی دفاعی صلاحیتوں کا اعتراف اقوام عالم کرتے ہیں۔ پاکستان کی منظم اور طاقتور فوج، انتہائی مہارت رکھنے والی دفا عی قوتوں اور بے مثل ایٹمی قوت کی وجہ سے پاکستان کو تسخیر کرنا تو دور کی بات، دشمن پاکستان کی طرف میلی آنکھ سے دیکھتے بھی گھبراتا ہے۔ حال ہی میں بھارت کی جانب سے سرحدی چھیڑ چھاڑ کے جواب میں پاک فوج نے دشمن کو ایسا سبق سکھایا کہ بھارت کے ایوانوں میں کھلبلی مچی ہے اور عوام میں اضطراب پایا جاتا ہے۔ پاکستان کی یہی بات دشمن کو خوفزدہ کرتی ہے کہ عسکری لحاظ سے اتنا مضبوط ملک اگر معاشی قوت بن گیا تو خطے میں پاکستان سب سے آگے نکل جائے گا۔

انہی خدشات کے پیش نظر سی پیک کو سبوتاژ کرنے کی ہر ممکن کوشش کی جا رہی ہے۔ بھارت نے پاکستان میں جاسوسی اور دہشت گردی کا منظم جال بچھا رکھا ہے جس کے ذریعے وہ اپنے ناپاک عزائم کی تکمیل کے لئے کوشش کرتا رہتا ہے، لیکن آپریشن ضربِ عضب کی ایک بڑی کامیابی یہ ہے پاکستان میں پھیلے اس نیٹ ورک کی کمر توڑ دی گئی ہے۔ بھارت کی کوشش صرف یہاں تک محدود نہیں، بلکہ چند سیاسی شخصیات پر بھی بھارت نے کافی محنت کی ہے اور وہ وقفے وقفے سے تواتر کے ساتھ سی پیک کی مخالفت کرتے رہتے ہیں اور یہ کھیل کافی عرصے سے جاری ہے۔ ایک سازش کے تحت میڈیا اور انسانی حقوق کی نام نہاد تنظیموں کے ذریعے سی پیک کے بارے میں جھوٹا، من گھڑت اور بے بنیاد پراپیگنڈہ مختلف حوالوں سے کیا جاتا رہا ہے۔

سوشل میڈیا اور مقامی اخبارات میں سیاسی جماعتوں کے بے جا اعتراضات حقیقت پر مبنی نہیں، بلکہ یہ اپنی سیاست چمکانے کا ایک وطیرہ ہے۔ ایک سیاسی جماعت حکومت وقت پر الزام عائد کرتی ہے کہ یہ مغربی روٹ کی تکمیل میں سنجیدہ نہیں۔ چینی سفیر سن وی ڈونگ نے واضح طور پر بیان دیا ہے کہ مغربی روٹ سے متعلق تمام خدشات غلط ہیں اور اس منصوبے کے فوائد سے پاکستان کے کسی ایک صوبے یا کسی ایک حصے کو محروم نہیں رکھا گیا ،بلکہ ان سب کو لنک روڈ کے ذریعے ایک دوسرے سے مربوط کیا جا رہا ہے۔چائنہ نے سی پیک کے تحت ابتدائی منصوبوں میں 14ارب ڈالر کی خطیر رقم کی سرمایہ کاری کی ہے۔ سی پیککی کامیابی اس بات سے بھی عیاں ہے کہ پاک فوج نے ایک ڈویژن فوج صرف پاک چین راہداری منصوبے کے لئے مختص کر دی ہے۔ یہ امر اس بات کی طرف اشارہ کرتا ہے کہ فوج اور حکومت کے درمیان ہم آہنگی پائی جاتی ہے۔اس لئے میڈیا ،سیاسی جماعتوں اور این جی اوز کو اس کے متعلق منفی باتیں پھیلانے سے گریز کرنا چاہیے۔

یہ ہزاروں کلو میٹر طویل منصوبہ ہے جس میں سڑکیں اور موٹر ویز شامل ہیں۔ اس کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ چین بارہ ہزار کلو میٹر کا سفر طے کر کے روزانہ تقریباً 65لاکھ بیرل ٹن تیل باہر سے منگواتا ہے۔ سی پیک کے بعد یہ سفر صرف 3ہزار کلو میٹر تک رہ جائے گا۔ سی پیک کو ناکام بنانے کی تازہ ترین کوشش صوبوں کی محرومی کا چرچا کر کے کی جا رہی ہے۔ چند مفلوک لوگوں کے ذریعے اس بات کو عوام تک پہنچایا جا رہا ہے کہ حقیقی ترقی تو صرف پنجاب میں ہی ہو رہی ہے اور باقی صوبوں کو یکسر نظر انداز کیا جا رہا ہے۔ اس قسم کا پروپیگنڈا کر کے سی پیک کو متنازعہ بنانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

پاکستان اپنے محل وقوع کے اعتبار سے تجارتی منڈیوں تک رسائی کے لئے ایک بہترین انتخاب ہے جس سے بہت سے ممالک مستفید ہو سکتے ہیں، لیکن پاکستان کو اس نقطہ عروج تک پہنچنے کے لئے بہت سے چیلنجز سے نبرد آزما ہونا پڑے گا، جس کے لئے مستحکم جمہوریت اور سول ملٹری ہم آہنگی بہت ضروری ہے۔ جہاں پاکستان کے اہم ادارے اور عوام کا کردار پاکستان کی ترقی کے لئے ناگزیر ہے اسی طرح میڈیا کا کردار بھی بہت اہم ہے۔ پاکستان کے میڈیا کو بھی بہت ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا چاہیئے اور ہر اس آواز کو بند کر دینا چاہیئے جو پاکستان کے خلاف اٹھائی جا رہی ہے اور پاکستان کی ترقی میں رکاوٹ بن رہی ہے۔کیا بھارت کی مثال ہمارے لئے کافی نہیں، بھارت اپنے جھوٹے دعووں کو کس طرح میڈیا کے ذریعے سچا ثابت کرنے کی کوشش کرتا ہے اور پاکستان کو پوری دنیا میں بدنام کرنے کی سازش کر رہا ہے، مگر حق پر ہونے کے باوجود پاکستان کی حکومت کو میڈیا سے وہ تعاون نہیں مل رہا جو اس کا حق ہے، کیونکہ کچھ مخصوص ذہنیت کے لوگوں نے میڈیا کے ایک چھوٹے سے حصے پر اپنا اثر و رسوخ جما رکھا ہے۔

پاکستان کی موجودہ عسکری اور سول قیادت باہمی تعلقات کے حوالے سے مثالی سمجھے جاتے ہیں اور عوام بھی اس بات کے معترف ہیں کہ سیاسی امن ملک کی ترقی کے لئے ناگزیر ہے۔ اس لئے جمہوریت کے خلاف اٹھنے والی ہر آواز کو عوام ہی دبا دیتے ہیں۔ آنے والے وقت میں پاکستان کے عوام کا کردار بہت اہم ہے اور پاکستان میں آنے والی ترقی اس بات کی متقاضی ہے کہ حکومت وقت پاکستان کی افواج اور پاکستان کے عوام مل کر پاکستان کی ترقی کے دشمنوں کا صفایا کریں۔سی پیک اور روشن پاکستان کی نوید لئے مسکرا رہا ہے اور اب وہ وقت دور نہیں کہ پاکستان خطے کی مضبوط معیشت بن کر ابھرے گا۔

مزید : کالم