خصوصی بچوں کی تعلیم و نگہداشت کے لئے منظم نظام لانے کے حوالے سے پنجاب اسمبلی میں قرارداد جمع

خصوصی بچوں کی تعلیم و نگہداشت کے لئے منظم نظام لانے کے حوالے سے پنجاب اسمبلی ...
خصوصی بچوں کی تعلیم و نگہداشت کے لئے منظم نظام لانے کے حوالے سے پنجاب اسمبلی میں قرارداد جمع

  

لاہور ( این این آئی) پاکستان تحریک انصاف کے رکن پنجاب اسمبلی ڈاکٹر مراد راس نے خصوصی بچوں کی تعلیم و نگہداشت کے لئے منظم نظام لانے کے حوالے سے پنجاب اسمبلی سیکرٹریٹ میں قرارداد جمع کروا دی جس میں کہا گیا ہے کہ پنجاب کا یہ مقدس ایوان حکومت سے خصوصی بچوں کی تعلیم و نگہداشت کے لئے منظم نظام لانے کا مطالبہ کرتا ہے منظم نظام نہ ہونے کی وجہ سے آبادی کا دس فیصد ذہنی و جسمانی معذوری سے زندگی گزارنے پر مجبور ہے۔

ادارہ شماریات کی رپورٹ کے مطابق پاکستان کی کل آبادی 181 ملین ہے جس میں سے معذور افراد کی تعداد ایک کروڑ 70 لاکھ سے زائد ہے۔ پاکستان کے سب سے بڑے صوبے پنجاب میں خصوصی بچوں کے سرکاری تعلیمی اداروں کی تعداد 250 کے قریب ہے اور یہ سکولز بھی دیہاتوں سے قوسوں دور ہیں جبکہ پاکستان میں 18 سال تک کی عمر کے 60 لاکھ سے زائد بچے ہیں جو کسی نہ کسی معذوری کا شکار ہیں۔ ایسے بچوں کی تعلیم و تربیت کے لئے یہ ادارے بہت کم ہیں اور وسائل کی کمی کا بھی شکار ہیں۔ عام تعلیمی اداروں میں ان بچوں کو داخلہ نہیں دیا جاتا۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

ضرور پڑھیں: اسد عمر کی چھٹی

حکومت پاکستان نے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے ڈکلریشن سے لے کر میلینیم ڈویلپمنٹ گولز تک تمام معاہدوں میں دستخط کئے ہوئے میلینیم ڈویلپمنٹ گولز کا شور تو بہت زیادہ ہے لیکن خصوصی بچوں کی تعلیم کے بغیر یہ حدف حاصل کرنا ناممکن ہے۔

مزید : لاہور