یمن، 40لاکھ انسان فاقہ کشی پر مجبور، اقوام متحدہ

یمن، 40لاکھ انسان فاقہ کشی پر مجبور، اقوام متحدہ

جنیوا(آئی این پی)اقوام متحدہ نے اپنی رپورٹ میں یمن کے حوالے سے دلخراش انکشافات کرتے ہوئے کہا ہے کہ یمن میں 40لاکھ انسان فاقہ کشی پر مجبور ہیں، فاقہ کشی نے ناقابلِ برداشتماہیت اختیار کر لی ہے،موذی امراض نے یمن میں پنجے گاڑ لئے ہیں۔ بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق(بقیہ نمبر16صفحہ12پر )

سالہا سال سے خانہ جنگی کی دلدل میں پھنسے اور دنیا کے عظیم ترین بحرانوں میں سے ایک سے دو چار یمن میں مقامی کرنسی ریال کی قدر میں گراوٹ نے لاکھوں انسانوں کو در پیش فاقہ کشی نے ایک خطرناک صورتحال اختیار کر لی ہے۔اقوام متحدہ کی یمن کوآرڈینیٹر لائس گراندے نے ادارے کی ویب سائٹ پر اپنے اعلان میں کہا ہے کہ"یمن اسوقت ایک عظیم سطح کے انسانی المیہ کے دور سے گزر رہا ہے۔ اس نے ویسے بھی ایک ناقابلِ برداشت ماہیت اختیار کر لی ہے۔ اس ملک میں لا تعداد انسان موت کے پنجے میں ہیں۔کرنسی کی قدر میں مندی کے خلاف کوئی حل چارہ نہ نکالے جانے کی صورت میں ہم ایک ناقابلِ واپسی موڑ پر آن کھڑے ہوں گے۔

"ان کا کہنا ہے کہ اقوام متحدہ کے عالمی فوڈ پروگرام اور امدادی شراکت داروں کی جانب سے ماہانہ تقریبا 80 لاکھ یمنی باشندوں کو خوراک کی امداد فراہم کی جاتی ہے، انہوں نے خبر دار کیا ہے کہ اس ملک کی کرنسی کی قدر میں کمی سے 40 لاکھ کے قریب انسان فاقہ کشی کی دہلیز پر پہنچ جائیں گے۔حفظان صحت سمیت کئی ایک معاملات میں بحران سے دو چار ملک میں صاف پانی تک عدم رسائی، خوراک کی کمیابی، ادویات و طبی سازو سامان کا فقدان اس ملک میں ہیضے اور دیگر موذی امراض کے پھیلا کا موج بن رہا ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...