تاجر کمیونٹی آرمی چیف سے ملاقات کے بعد خوش واپس گئی، حکومت نے اپنی سیاست بچانے کیلئے سخت فیصلے کرنے میں تاخیر کی: حماد اظہر 

    تاجر کمیونٹی آرمی چیف سے ملاقات کے بعد خوش واپس گئی، حکومت نے اپنی سیاست ...

  

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)وفاقی وزیر اقتصادی امور حماد اظہر کا کہنا ہے کہ حکومت نے اپنی سیاست بچانے کیلئے سخت فیصلے کرنے میں تاخیر کی۔وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ ہر مستحق شخص کو بلاتفریق صحت انصاف کارڈ فراہم کیا جائے گا اور اس کا آغاز لاہور سے کیا جارہا ہے جس سے 30 سے 35 ہزار گھرانے اِس سہولت سے مستفید ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ ہم نے پاکستان کی تاریخ کا ریکارڈ ساڑھے 10 ارب کا قرضہ واپس کیا، ہمیں سخت فیصلے کرنے پڑے جس کے ثمرات نظر آنے لگے ہیں۔ان کا کہنا ہے کہ حکومت کو معیشت کے حوالے سے سخت فیصلے کرنے پڑے لیکن حکومت نے اپنی سیاست بچانے کیلئے سخت فیصلے کرنے میں تاخیر کی، مشکل فیصلوں کی وجہ سے اب حالات میں بہتری آرہی ہے۔حماد اظہر کا کہنا تھا کہ سابق حکومت کے غلط فیصلوں کے باعث بجلی کی قیمتیں بڑھانا پڑیں، روپے کی قیمت میں استحکام اچھا اشارہ ہے، اب معیشت کی رفتار میں تیزی نظر آئے گی جو خساروں، قرضوں، سبسڈی اور درآمدات کی بنیاد پر نہیں ہوگی بلکہ روزگار، سرمایہ کاری اور زراعت کی بنیاد پر ہوگی۔آرمی چیف سے تاجروں کی ملاقات سے متعلق وفاقی وزیر نے کہا کہ کاروباری افراد کا وفد آرمی چیف سے بہترین گفتگو کے بعد خوش ہوکر واپس گیا، آرمی چیف کی طرف سے پیغام دیا گیا کہ ملکی استحکام کو خطرے میں ڈالنے نہیں دیا جائے گا۔ان کا کہنا تھا کہ اِس وقت تمام ادارے ایک پیج پر اور قومی مقاصد کیلئے ہم آہنگ ہیں، 5 سال میں سب ادارے مل کر پاکستان کو عظیم ملک بنائیں گے۔حماد اظہر کا کہنا ہے کہ فضل الرحمان کے ساتھ کوئی بھی کھڑا ہونے کو تیار نہیں، مدرسوں کے بچوں کو سیاسی ہتھکنڈوں کے لیے استعمال نہیں کرنا چاہیے، مذہبی طبقہ بھی وزیراعظم کے ساتھ ہے، روپے کی قدر مستحکم ہو رہی ہے۔ حماد اظہر نے کہا ہے کہ فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف)کا کو چیئر ہونے کی وجہ سے بھارت کے پاکستان کے خلاف عزائم کوپوری دنیا کے سامنے رکھ دیا ہے، قوم بہتری کی امید رکھے اور خطرے کی کوئی بات نہیں، 29ممالک سے ملنے والے اعدادوشمار کے مطابق پاکستانیوں کے بیرون ممالک 11ارب ڈالر زپڑے ہیں جن میں سے 50فیصد ظاہر نہیں کئے گئے،ہمیں اقامہ ہولڈر ز کاریکارڈ نہیں دیا گیا اور اب پتہ چلا ہے کہ یہ لوگ اقامہ کے اتنے شوقین کیوں تھے، او ای سی ڈی کو ریکارڈ کے حصول کیلئے خط بھی لکھ دیا ہے اور پیرس کے دورہ کے دوران ہیڈ کوارٹر میں ذمہ داران سے بھی بات کرنے کی کوشش کروں گا، سابقہ حکمرانوں نے اپنی سیاست کو بچانے کیلئے معیشت کو خطرے میں ڈالا، ہمارے دور حکومت میں خزانہ بھی سوچ رہاہے کہ ابھی تک مجھے کوئی لوٹنے کیلئے کیوں نہیں آیا۔وزیراطلاعات پنجاب میاں اسلم اقبال کا کہنا ہے کہ میرٹ کو سپورٹ کریں گے، معاشی صورتحال تیزی سے بہتر ہو رہی ہے، ایم ٹی آئی ایکٹ سے ہمارا نہیں عوام کا فائدہ ہے، اس کیخلاف احتجاج سے کوئی فائندہ نہیں ہوگا۔لاہور میں وزیراطلاعات پنجاب اسلم اقبال کے ہمراہ پریس کانفرنس کے دوران وزیر ریونیو حماد اظہر کا کہنا تھا کہ ن لیگ کے دورمیں زرمبادلہ کے ذخائر آدھے رہ گئیتھے، اس وقت مستحکم ہیں، روپے کی قدر میں بہتری آئی ہے، معیشت میں استحکام آ گیا، اب بہتری کی طرف جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ سابق حکومت نیسیاست بچانے کیلئے معیشت تباہ کر دی، سابق حکمران اپنے ہی گھر کو لوٹ کر چلے گئے، ماضی کی حکومتوں کے غلط فیصلوں کے باعث بجلی مہنگی کرنی پڑی۔وزیراطلاعات پنجاب اسلم اقبال نے کہا کہ عام آدمی کو سہولت دینے پر سمجھوتہ نہیں ہوگا،سرکاری ہسپتالوں میں ایک بیڈ کا خرچہ 45 لاکھ روپے سالانہ ہے، صحت کے شعبے میں آڈٹ کرانا ہمارا حق ہے، تھرڈ پارٹی آڈٹ کرایا تو پتا چلا سرکاری جسپتالوں میں کوئی ڈاکٹر 2 گھنٹے کے لیے آتا ہے تو کوئی 3،3 دن نہیں آتا،مریض ہسپتالوں میں خوارہورہے ہیں اور ڈاکٹر پرائیویٹ پریکٹس کررہے ہیں، ہم نے حاضری کا پوچھ لیا تو کیا برا کام کیا ہے؟، ایک ڈاکٹر اور سرجن کتنے آپریشن کرتا ہے کیا یہ پوچھنا برا ہے؟ اگرکوئی کہتا ہے مریض کا آپریشن نہیں ہو رہا تو کیا معاملہ ایسے ہی چھوڑ دیں؟۔میاں اسلم اقبال نے کہاکہ ہم عام آدمی کیلئے کام کر رہے ہیں، ہیلتھ کارڈ ایک احساس کا نام ہے، معذور افراد کو دو ہزار روپے دوائی کے لئے دے رہے ہیں، عام آدمی کی سہولت پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہو گا، کوئی کسی کا سفارشی نہیں ہو گا، ایم ٹی آئی ایکٹ میں وزیراعظم یا وزرا کا کوئی فائدہ نہیں، ایم ٹی آئی ایکٹ پر کسی کو اعتراض ہے تو ہم سے بات چیت کر لے، ڈاکٹر صاحبان کی تنظیموں کیساتھ بیٹھنے کے لیے تیار ہیں، اگر یہ سمجھتے ہیں کہ ہڑتالیں کرکے ناجائز بات منوا لیں گے تو یہ نا ممکن ہے۔انہوں نے کہا کہ سابقہ دو رمیں حکمرانوں کے چھ، چھ کیمپ آفسز تھے، 70،70کروڑ خرچ کر بم پروف دیواریں بنائی گئیں لیکن ہم نے اپنے 45 ارب روپے کی اخراجات کو کم کیا ہے،اس سے زیادہ سادگی کیا کریں، ان کے اسکینڈل اب نہ رکتے ہیں نہ تھمتے ہیں۔

حما داظہر

مزید :

صفحہ اول -