فضل الرحمن نواز شریف اور زرداری کی شطر نج کے پیادے ہیں: فواد

      فضل الرحمن نواز شریف اور زرداری کی شطر نج کے پیادے ہیں: فواد

  

لاہور(نیوزایجنسیاں) وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے کہا ہے کہ رویت ہلال کمیٹی کو صفر کے مہینے کی غلط اطلاع پر معافی مانگنی چاہیے، پیپلز پارٹی اور (ن) لیگ کا مطالبہ آصف زرداری اور نواز شریف کی جیل سے رہائی ہے، ہم روز کہتے ہیں کہ پیسے دو اور ابو لو، نواز شریف اور آصف زرداری کے شطرنج کے کھیل کے فضل الرحمان پیادہ ہیں، جمعیت علمائے اسلام پورے ملک میں 60نشستوں پر امیدوار کھڑے کرتے ہیں ان کاتو انتخابات سے اتنا تعلق ہی نہیں ہے، پیپلز پارٹی اور (ن)لیگ مولانا فضل الرحمان کو فنڈ ز دے رہی ہیں،جنوبی ایشیاء کا سب سے بڑ ابائیو ٹیکنالوجی پارک اورہر بل پارک بنانے جارہے ہیں،پاکستان میں کنسورشیم کے ذریعے اپنی بیٹری بنانے کیلئے ریسرچ کا آغاز کریں گے۔لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فواد چوہدری نے کہا کہ اسلامی مہینے ماہ صفر کے غلط اعلان پر رویت ہلال کمیٹی کو معافی مانگنی چاہیے،چند روز قبل وزارت رویت ہلال سے متعلق جدید ٹیکنالوجی کے استعمال پر ہونے والے اجلاس میں وفاقی وزیر برائے مذہبی امور پیر نورالحق قادری نے کہا تھا کہ چاند کی رویت کے معاملے پر وزارت مذہبی امور رویت ہلال کمیٹی کے ساتھ کھڑی ہے۔ا نہوں نے کہا کہ ملک کا ایک ایسا بے شعور طبقہ بھی ہے جس سے بات ہی نہیں کی جا سکتی، عقل اور شعور رکھنے والا طبقہ بات سمجھ سکتا ہے۔ عقل او رعلم سے ہی ہم آگے جا سکتے ہیں اور اس کا استعمال کئے بغیر کچھ نہیں ہو سکتا۔ہم 80ء کی دہائی میں پھنسے ہوئے ہیں اور ایسے لوگ پیدا کئے جن کا عقل او رشعور سے کوئی تعلق اور یہ لوگ پسماندگی کی طرف جانا چاہتے ہیں۔ اگر دو بین اور دیگر جدید آلات سے چاند دیکھنا غیر شرعی ہے تو پھر عینک سے بھی چاند نہیں دیکھا جا سکتا، پھر 80برس کے بابوں کے بجائے نوجوانوں کو چاند دیکھنا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ میں اپنی وزارت میں اصلاحات لے کر آرہا ہوں، پانچ بڑے منصوبے شروع کر رہے ہیں۔ جہلم میں جنوبی ایشیاء کاسب سے بڑا بائیو ٹیکنالوجی کا پارک بنا رہے ہیں، اسی طرح ہربل میڈیسن کا پارک بنا رہے ہیں اور یہ بھی جنوبی ایشیاء کا سب سے بڑا پارک ہوگا۔ ہماری یہ ناکامی رہی ہے کہ ہم اپنا کمرشل انجن نہیں بنا سکے اور انجینئرنگ میں پیچھے رہ گئے، ہم اپنی بیٹری نہیں بنا سکے، اب اس طرف پیشرفت کر رہے ہیں اور انڈسٹری، یونیورسٹی کے طلبہ اور باہر کے ممالک کے ماہرین کے کنسورشیم سے ریسرچ کریں گے، آنے والے دنوں میں گاڑیاں بھی بیٹریاں بھی چلی جائیں گی، یہ بھی ہو سکتا ہے کہ کھمبے اور تاریں ختم ہو جائیں اور اس کی جگہ بیٹری آ جائے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے پنجاب کو انتباہ کیا ہے کہ زیر زمین پانی کی صورتحال انتہائی تشویشناک حد تک نیچے جارہی ہے، ہر سال زیر زمین پانی ایک میٹرنیچے جارہا ہے اور یہی سلسلہ چلتا رہا توآئندہ چھ سالوں میں لاہور میں پانی نہیں ملے گا۔ ہم نے ایل ڈی اے اور سی ڈی اے کو پیشکش کی ہے کہ واٹر ری چارج سکیم کیلئے ہمارے ساتھ کام کریں جس سے بارش کے پانی کو ری چارج کیا جاسکے گا۔ ویسٹ ٹو انرجی کی ٹیکنالوجی کی طرف جارہے ہیں جس سے ایک گیزر جتنا ڈسبن ہوگا اور کوڑا کرکٹ اس میں ڈالیں گے تو اس سے گھر کیلئے گیس بن جائے گی۔ زرعی ٹیکنالوجی میں ڈرونز کا بڑا کردار ہے، وزیر اعظم عمران خان سے درخواست کی ہے کہ زراعت کیلئے اس کے استعمال پر سے بھی پابندی ختم کی جائے۔ انہوں نے کہا کہ کشمیر میں مارچ کے حوالے سے سوال کے جواب میں کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اگر کوئی ایل او سی پار کرے گا تو یہ بھارت کے بیانیے سے کھیلنے  کے مترادف ہوگا۔ نریندر مودی کو آج کشمیر میں سیاسی طور پر ایک کونسلر کی بھی حمایت حاصل نہیں اور پور اکشمیر کٹ مرنے کے لئے تیار ہے۔ وزیر اعظم عمران خان جتنی کوشش کر سکتے ہیں انہوں نے وہ کی ہے اور کر رہے ہیں۔ نریندر مودی ٹس سے مس نہیں ہورہا لیکن ہم چاہتے ہیں کہ امن کو ہاتھ سے نہ جانے دیں اس لئے عالمی دنیا توجہ کرے اور تشویش اور بیانات سے آگے بڑھ کر عملی اقدامات کرے۔ انہوں نے مولانا فضل الرحمان کے آزادی مارچ اور نئے انتخابات کے مطالبے پر کہا کہ مولانا فضل الرحمان کا نئے انتخابات سے کیا تعلق ہے،وہ تو 60 نشستوں سے زائد پر اپنے امیدوار کھڑے نہیں کرتے،ان کا نئے انتخابات کا مطالبہ بلا جواز ہے۔پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) والے صرف اپنی قیادت کی رہائی چاہتے ہیں، دونوں جماعتوں کو عوامی مسائل سے کوئی سروکار نہیں۔ہم تو آج بھی کہتے ہیں کہ پیسے دو اور ابو لو لیکن پی پی اور (ن)لیگ والے بغیر پیسہ دیئے قیادت کی رہائی چاہتے ہیں۔پیپلز پارٹی اور (ن) لیگ مولانا فضل الرحمان کو استعمال کر رہی ہیں جبکہ مولانا فضل الرحمان مدرسوں کے طلبہ کو چارے کی طرح استعمال کرنا چاہتے ہیں۔اپوزیشن نے ایک دوسرے پر کیسز بنائے، ہم نے کوئی کیس نہیں بنایا، ہمارے تو اپنے لوگوں کے خلاف نیب کی کارروائیاں ہوئی ہیں۔

فواد

مزید :

صفحہ اول -