اب نبھانی ہی پڑے گی دوستی جیسی بھی ہے | شہزاد احمد |

اب نبھانی ہی پڑے گی دوستی جیسی بھی ہے | شہزاد احمد |
اب نبھانی ہی پڑے گی دوستی جیسی بھی ہے | شہزاد احمد |

  

اب نبھانی ہی پڑے گی دوستی جیسی بھی ہے 

آپ جیسے بھی ہیں نیت آپ کی جیسی بھی ہے 

کھل چکی ہیں اس کے گھر کی کھڑکیاں میرے لیے 

رُخ مری جانب رہے گا بے رخی جیسی بھی ہے 

اجنبی شہروں میں تجھ کو ڈھونڈھتا ہوں جس طرح 

اک گلی ہر شہر میں تیری گلی جیسی بھی ہے 

آج کے دکھ ہی بہت ہیں, بیمِ فردا کس لیے 

کٹ ہی جائے گی اذیت کی گھڑی جیسی بھی ہے 

دھندلا دھندلا ہی سہی رستہ دکھائی تو دیا 

آج کا دن ہے غنیمت روشنی جیسی بھی ہے 

جھولتی ہے میرے دل میں ایک شاخ اس پیڑ کی 

وہ تر و تازہ ہے یا سوکھی ہوئی جیسی بھی ہے 

میں نے دیکھا ہے فلک کو جاگتے سوتے ہوئے 

میری آنکھوں تک تو آئی چاندنی جیسی بھی ہے 

اب کہاں لے جائیں سانسوں کی سلگتی آگ کو 

زندگی ہے زندگی، اچھی بری جیسی بھی ہے 

اپنا حق شہزادؔ ہم چھینیں گے، مانگیں گے نہیں 

رحم کی طالب نہیں بے چارگی جیسی بھی ہے 

شاعر: شہزاد احمد

(مجموعۂ کلام: ادھ کھلا دروازہ؛سالِ اشاعت،1977)

Ab    Nibhaani   Hi   Parray   Gi   Dosti    Jaisi   Bhi   Hay

Aap   Jaisay   Bhi   Hen  Niyyat   Aap   Ki   Jaisi   Bhi   Hay

Khul   Chuki   Hen   Uss   K    Ghar   Ki   Khirrkiyaan   Meray   Liay

Rukh   Miri   Jaanib   Rahay   Ga   Be Rukhi    Jaisi   Bhi   Hay

Anjabi   Shehron   Men   Tujh   Ko    Dhoondta   Hun   Jiss  Tarah

Ik   Gali   Har   Shehr   Men   Teri   Gali   Jaisi   Bhi   Hay

Aaj    K   Dukh   Hi   Bahut   Hen  ,   Beem-e-Fardaa   Kiss   Liay

Katt    Hi   Jaaey   Gi   Aziyyat   Ki    Gharri   Jaisi   Bhi   Hay

Dhundla   Dhundla   Hi   Sahi   Rasta   Dikhaai To  Diya

Aaj   Ka   Din   Hay   Ghaneemat    Roshni   Jaisi   Bhi   Hay

Jhoolti   Hay    Meray   Dil   Men   Aik    Shaakh   Uss   Pairr   Ki

Wo    Taar-o-Taaza   Hay Ya    Sookhi   Hui   Jaisi   Bhi   Hay

Main   Nay   Dekha    Hay    Falak    Ko    Jaagtay    Sotay   Huay

Meri   Aankhon   Tak   To    Aaai    Chaandni    Jaisi   Bhi   Hay

Ab   Kahan    Lay    Jaaen    Saason    Ki    Sulagti    Aag   Ko

Zindagi    Hay    Zindagi   ,    Achi    Buri   Jaisi   Bhi   Hay

Apna    Haq    Ham    SHAHZAD    Chheenen    Gay   ,   Maangen    Gay   Nahen

Rehm   Ki    Taalib    Nahen    Bechaargi    Jaisi   Bhi   Hay

Poet: Shahzad   Ahmad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -