تصویر کے خطوط نگاہوں سے ہٹ گئے| شہزاد احمد |

تصویر کے خطوط نگاہوں سے ہٹ گئے| شہزاد احمد |
تصویر کے خطوط نگاہوں سے ہٹ گئے| شہزاد احمد |

  

تصویر کے خطوط نگاہوں سے ہٹ گئے

میں جن کو چومتا تھا وہ کاغذ ہی  پھٹ گئے

انسان اپنی شکل کو پہچانتا نہیں

آ  آ کےآئینوں سے پرندے چمٹ گئے

بنتی رہی وہ ایک سویٹر کو مدتوں

چپ چاپ اس کے کتنے شب و روز کٹ گئے

آخر کسی کشش نے انہیں کھینچ ہی لیا

دروازے تک وہ آئے تھے آ کر پلٹ گئے

اتنا بھی وقت کب تھا کہ پتوار تھام لیں

ایسی چلی ہوا کہ سفینے اُلٹ گئے

پابندیاں تو صرف لگی تھیں زبان پر

محسوس یہ ہوا کہ مرے ہاتھ کٹ گئے

کچھ سرد تھی ہوا بھی نظر کے دیار کی

کچھ ہم بھی اپنے خول کے اندر سمٹ گئے

شہزاد پھر سے رختِ سفر باندھ لیجیے

رستے بھی سوکھ جائیں گے، بادل تو چھٹ گئے

شاعر: شہزاد احمد

(مجموعۂ کلام: ادھ کھلا دروازہ؛سالِ اشاعت،1977)

Tasveer   K   Khatoot   Nigaahon   Say   Hatt   Gaey

Main   Jin   Ko    Choomta   Tha   Wo   Kaaghaz   Hi   Phatt    Gaey

Insaan   Apni   Shakl   Ko   Pehchaanta   Nahen

Aa   Aa   K   Aainon   Say   Parinday   Chimatt   Gaey

 

Bunti    Rahi   Wo    Aik    Sowaitar    Ko   Muddaton

Chup   Chaap   Uss   K    Kitnay    Shab-o-Roz    Katt    Gaey

 

Aaakhir   Kisi    Kashish    Nay    Inhen   Khhainch    Hi   Liya

Darwaazay    Tak    Wo    Aaaey    Thay    Aa    Kar    Palatt    Gaey

 Itna   Bhi    Waqt    Kam    Tha    Keh    Patwaar    Thaam    Len

Aisi    Chali    Hawaa    Keh    Safeenay    Ulatt   Gaey

 Pabandiyaan   To    Sirf     Lagi    Theen    Zubaan   Par

Mehsoos   Yeh    Hua    Keh    Miray    Haath    Katt    Gaey

 Kuch   Sard   Thi    Hawaa    Bhi    Nazar     K    Dayaar   Ki

Kuch    Ham    Bhi    Apnay   Khaol    K    Andar    Simatt   Gaey

 

SHEHZAD    Apnay    Rakht-e-Safar    Baandh    Lijiay

Rastay   Bhi    Sookh    Jaaen   Gay   ,    Baadal    To    Chhatt    Gaey

 

Poet: Shahzad   Ahmad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -