واسطہ مجھ کو خدایا نہ پڑے لوگوں سے| شہزاد احمد |

واسطہ مجھ کو خدایا نہ پڑے لوگوں سے| شہزاد احمد |
واسطہ مجھ کو خدایا نہ پڑے لوگوں سے| شہزاد احمد |

  

واسطہ مجھ کو خدایا نہ پڑے لوگوں سے

چھوٹی باتوں کی توقع ہے بڑے لوگوں سے

راہ چلتی کوئی لڑکی کہ سگِ آوارہ

کون محفوظ ہے راستے میں کھڑے لوگوں سے

چاند کو دیکھنے نکلا نہ کوئی گھر والا

بھر گئے شہر کے میدان چھڑے لوگوں سے

اپنے کاندھوں پہ لیے پھرتے ہیں مردہ قدریں

مدتوں میں بھی یہ لاشے نہ گڑے لوگوں سے

یہ الگ باتوں کہ لوگوں میں ہے شامل تو بھی

تیری خاطر بھی کئی بار لڑے لوگوں سے

عمر بھر جن میں زرومال کو محفوظ کیا

اب اُٹھائے نہیں جاتے وہ گھڑے لوگوں سے

سفرِ شوق کا انجام جو ہونا تھا ہوا

تم تو بے فائدہ شہزاد اَڑے لوگوں سے

شاعر: شہزاد احمد

(مجموعۂ کلام: ادھ کھلا دروازہ؛سالِ اشاعت،1977)

Waasta   Mujh   Ko   Khudaaya    Na   Parray   Logon   Say

Chhoti   Baaton   Ki    Tawaqqo    Hay    Barray    Logon   Say

Raah    Chalti   Koi    Larrki    Keh    Sag-e-Aawaara

Kon    Mehfooz    Hay    Raastay    Men    Kharray    Logon   Say

Chaand    Ko    Dekhnay     Nikla    Na    Koi    Ghar   Waala

Bhar    Gaey    Shehr   K   Maidaan    Chharray    Logon   Say

Apnay    Kaandhon    Pe    Liay   Phirtay    Hen    Murda   Qadren

Mudaton   Men    Bhi   Yeh    Laashay    Na   Garray    Logon   Say

Yeh   Alag    Baat    Keh    Logon    Men    Hay    Shaamil    Tu   Bhi

Teri    Khaatir    Bhi    Kai    Baar   Larray    Logon   Say

Umr    Bhar   Jin    Men    Zar-o-Maal    Ko    Mehfooz   Kiya

Ab   Uthaaey    Nahen    Jaatay   Wo   Gharray    Logon   Say

Safar-e-Shaoq    Ka     Anjaam    Jo     Hona    Tha   Hua

Tum    To    Be  Faaida   SHEHZAD    Array    Logon   Say

Poet: Shahzad    Ahmad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -