کلام کرتا ہوا ، راستہ بناتا ہوا| صابر ظفر |

کلام کرتا ہوا ، راستہ بناتا ہوا| صابر ظفر |
کلام کرتا ہوا ، راستہ بناتا ہوا| صابر ظفر |

  

کلام کرتا ہوا ، راستہ بناتا ہوا

گزر رہا ہوں میں اپنی فضا بناتا ہوا

مجھے نہ ڈھانپ سکی عمر بھر کی بخیہ گری

برہنہ رہ گیا میں تو قبا بناتا ہوا

یہی بہار ہے میری کہ میں گزرتا ہوں

ہر ایک خشک شجر کو ہرا بناتا ہوا

ہر ایک شاخ بدستو ر لہراتی رہی

پرندہ سوکھ گیا گھونسلہ بناتا ہوا

اب اور کیا ہو ظفر انتہا مشقت کی

شکستہ ہو گیا میں آئنہ بناتا ہوا

شاعر: صابر ظفر

(مجموعۂ کلام: پاتال؛سالِ اشاعت،1987)

Kalaam   Karta   Hua    Raasta    Banaata   Hua

Guzar    Raha    Hun    Main    Apni   Fazaa   Banaata  Hua

Mujhay   Na    Dhaanp    Saki   Umr   Bhar   K    Bakhiya   Gari

Barehna    Reh    Gaya    Main   To    Qabaa    Banaata  Hua

Yahi    Bahaar    Hay   Meri    Keh    Main    Guzarta   Hun

Har   Aik    Khusk    Shajar    Ko   Haraa    Banaata  Hua

Har    Aik   Shaakh   Badastoor   Lehlahaati   Rahi

Parinda   Sookh   Gaya    Ghaonsalaa   Banaata  Hua

Ab   Aor   Kaya   Ho  ZAFAR   Intahaa   Mushaqqat   Ki

Shakista    Ho   Gaya   Hun    Main    Aaina     Banaata  Hua

Poet: Sabir    Zafar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -