خدا کا ذکر نہ کر اِن اداس لوگوں سے| صابر ظفر |

خدا کا ذکر نہ کر اِن اداس لوگوں سے| صابر ظفر |
خدا کا ذکر نہ کر اِن اداس لوگوں سے| صابر ظفر |

  

خدا کا ذکر نہ کر اِن اداس لوگوں سے

یہ اہلِ دہر ہیں، رکھتے ہیں آس لوگوں سے

زمیں سفر میں ہے اپنی جگہ ہے کون یہاں

سہارا مانگنا کیا، بے اساس لوگوں سے

ستارے ٹوٹے رہتے ہیں ، بجھتے رہتے ہیں

تو کیا امید، ستارہ شناس لوگوں سے

یہ تیرے ہاتھ بہت نرم بھی ہیں، گرم بھی ہیں

انہیں ملایا نہ کر، بد حواس لوگوں سے

وصال کے لیے قائل نہیں وسیلے کے

سو ہم ہیں دور ترے آس پاس لوگوں سے

پرانے لوگ ہیں ہم، عیب ڈھانپنے والے

چُرا رہے ہیں نظربےلباس لوگوں سے

عوام سے مرا رشتہ سدا رہے گا ظفر

ادراکِ تعلقِ خاص اپنے خاص لوگوں سے

شاعر: صابر ظفر

(مجموعۂ کلام: پاتال؛سالِ اشاعت،1987)

Khuda   Ka   Zikr   Na   Kar   In   Udaas    Logon   Say

Yeh   Ehl-e-Dehr   Hen   Rakhtay   Hen   Aas    Logon   Say

Zameen   Safar   Men   Hay   Apni    Jagah   Hay   Kon   Yahan

Sahaara   Maangna   Kaya    Be  Asaas    Logon   Say

Sitaaray   Toot'tay   Rehtay    Hen    Bujhtay    Rehtay   Hen

To   Kaya    Umeed     Sitaara    Shanaas    Logon   Say

Yeh    Teray    Haath     Bahut    Narm    Bhi    Hen   Garm   Bi   Hen

Inhen    Milaaya    Na    Kar    Bad  Hawaas      Logon   Say

Visaal   K    Liay   Qaail    Nahen   Waseelay   K

So   Ham    Door    Hen   Tiray    Aas   Paas    Logon   Say

Puraany   Log    Hen   Ham   Aib    Dhaanpnay Waalay

Churaa    Rahay   Hen   Nazar   Be  Liabaas    Logon   Say

Awaam   Say  Mira   Rishta   Sadaa   Rahay   Ga   ZAFAR

Idraak-e-Talluq-e-Khaas   Apnay    Khaas    Logon   Say

Poet: Sabir   Zafar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -