میں ہم کلام ہوا تو سوال تک پہنچا| صابر ظفر |

میں ہم کلام ہوا تو سوال تک پہنچا| صابر ظفر |
میں ہم کلام ہوا تو سوال تک پہنچا| صابر ظفر |

  

میں ہم کلام ہوا تو سوال تک پہنچا

یہی معاملہ آخر وصال تک پہنچا

ترا کرم ہے کہ ہے روح تک رسائی مری

زمانہ صرف ترے خدوخال تک پہنچا

وہ درد ہی نہیں جس نے دوا کی مہلت سی

وہ زخم ہی نہیں جو اندمال تک پہنچا

نہیں ہے وصل اگر تو کوئی وسیلہ کر

نہیں ہے اصل اگر تو مثال تک پہنچا

شاعر: صابر ظفر

(مجموعۂ کلام: پاتال؛سالِ اشاعت،1987)

Main    Ham    Kalaam   Hua  To   Sawaal   Tak   Pahuncha

Yahi   Muaamla    Aakhir   Visaal   Tak   Pahuncha

Tira   Karam   Hay   Keh    Hay   Rooh   Tak    Rasaai   Miri

Zamaana   Sirf    Tiray    Khad -o-Khaal   Tak   Pahuncha

Wo    Dard    Hi    Nahen    Jiss   Nay   Dawaa   Ki    Mohlat   Di

Wo   Zakhm   Hi   Nahen   Jo   Indamaal   Tak   Pahuncha

Nahen   Hay   Wasl    Agar   To    Koi    Waseela   Kar

Nahen   Hay   Asl   Agar   To   Misaal   Tak   Pahuncha

Poet: Sabir   Zafar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -