پروموشن سے متعلق کیس ، سپریم کورٹ کا کانسٹیبل ناصر خان کو 2003 سے سب انسپکٹر کا عہدہ دینے کا حکم 

پروموشن سے متعلق کیس ، سپریم کورٹ کا کانسٹیبل ناصر خان کو 2003 سے سب انسپکٹر کا ...
پروموشن سے متعلق کیس ، سپریم کورٹ کا کانسٹیبل ناصر خان کو 2003 سے سب انسپکٹر کا عہدہ دینے کا حکم 

  

پشاور(ڈیلی پاکستان آن لائن)سپریم کورٹ نے پروموشن سے متعلق کیس میں کانسٹیبل ناصر خان کو 2003 سے سب انسپکٹر کا عہدہ دینے کا حکم دیدیا، عدالت نے آئی جی کو3 ماہ میں سنیارٹی لسٹ مرتب کرکے رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کاحکم دیدیا۔

نجی ٹی وی سما نیوز کے مطابق پشاور رجسٹری میں محکمہ پولیس میں کانسٹیبل ناصر خان کی پروموشن سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی،چیف جسٹس گلزاراحمد کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے سماعت کی ۔

وکیل درخواست گزار نے کہاکہ ناصر خان 1991 میں بطور کانسٹیبل بھرتی ہوئے ،اہلیت کے باوجود سنیارٹی بنیاد پر پروموشن نہیں دی جا رہی ، چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ آپ نے کسی افسر کوناراض کیا ہوگااس لئے پروموٹ نہیں کررہے ہیں،ایڈووکیٹ جنرل نے کہاکہ یہ ریگولر پولیس میں نہیں بلکہ ایف آر پی میں تھا۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے کہاکہ 2003 میں آپ نے ان کو ریگولر پولیس میں شامل کیا،چیف جسٹس گلزاراحمد نے کہاکہ اس کو آپ نے اسسٹنٹ سب انسپکٹر کیوں رکھا، پروموشن کیوں نہیں کی ۔

سماعت کے دوران پولیس افسران کی بار بار روسٹرم پر آنے کی کوشش پر عدالت برہم ہو گئی ، جسٹس اعجازا لاحسن نے کہاکہ ایڈووکیٹ جنرل کھڑا ہے، انہیں بات کرنے دیں،سپریم کورٹ نے پروموشن سے متعلق کیس میں کانسٹیبل ناصر خان کو 2003 سے سب انسپکٹر کا عہدہ دینے کا حکم دیدیا، عدالت نے آئی جی کو3 ماہ میں سنیارٹی لسٹ مرتب کرکے رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کاحکم دیدیا۔

مزید :

قومی -علاقائی -خیبرپختون خواہ -پشاور -