تو نے کچھ بھی نہ کہا ہو جیسے|صوفی تبسم |

تو نے کچھ بھی نہ کہا ہو جیسے|صوفی تبسم |
تو نے کچھ بھی نہ کہا ہو جیسے|صوفی تبسم |

  

تو نے کچھ بھی نہ کہا ہو جیسے

میرے ہی دل کی صدا ہو جیسے

یوں تری یاد سے جی گھبرایا

تو مجھے بھُول گیا ہو جیسے

اس طرح تجھ سے کئے ہیں شکوے

مجھ کو اپنے سے گلا ہو جیسے

یوں ہر اک نقش پہ جھکتی ہے جبیں

تیرا نقشِ کفِ پا ہو جیسے

تیرے ہونٹوں کی خفی سی لرزش

اِک حسیں شعر ہوا ہو جیسے

شاعر: صوفی تبسم

Tu   Nay   Kuchh   Bhi   Na   Kaha   Ho   Jaisay

Meray   Hi   Dil   Ki   Sadaa   Ho   Jaisay

Yun   Tiri   Yaad   Say   Ji   Ghabraaya

Meray   Hi   Dil   Ki   Sadaa   Ho   Jaisay

 Iss   Liay   Tujh   Say   Kiay   Hen   Shikway

Mujh    Ko    Apnay   Say   Dilaa   Ho   Jaisay

 Yun   Har   Ik   Naqsh   Pe   Jhukti   Hay   Jabeen

Tera    Naqsh-e-Kaf-e-Paa    Ho   Jaisay

 Teray   Honton   Ki    Khafi   Si   Larzish 

Ik    Haseen   Sher   Hua   Ho   Jaisay

 

Poet: Sufi   Tabassum

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -