سو بار چمن مہکا سو بار بہار آئی|صوفی تبسم |

سو بار چمن مہکا سو بار بہار آئی|صوفی تبسم |
سو بار چمن مہکا سو بار بہار آئی|صوفی تبسم |

  

سو بار چمن مہکا سو بار بہار آئی

دنیا کی وہی رونق دل کی وہی تنہائی

یہ رات کی خاموشی یہ عالمِ تنہائی

پھر درد اٹھا دل میں پھر یاد تری آئی

اس موسمِ گل ہی سے بہکے نہیں دیوانے

ساتھ ابرِ بہاراں کے وہ زلف بھی لہرائی

ہر دردِ محبت سے الجھا ہے غمِ ہستی

کیاکیا ہمیں یاد آیا جب یاد تری آئی

جلووں کے تمنائی جلووں کو ترستے ہیں

تسکین کو روئیں گےجلووں کے تمنائی

دنیا ہی فقط میری حالت پہ نہیں چونکی

کچھ تیری بھی آنکھوں میں ہلکی سی چمک آئی

اوروں کی محبت کے دہرائے ہیں افسانے

بات اپنی محبت کی ہونٹوں پہ نہیں آئی

وہ مست نگاہیں ہیں یا وجد میں رقصاں ہے

تسنیم کی لہروں میں فردوس کی رعنائی

سمٹی ہوئی آہوں میں جو آگ سلگتی تھی

بہتے ہوئے اشکوں نے وہ آگ بھی بھڑکائی

پھیلی ہیں فضاؤں میں اس طرح تری یادیں

جس سمت نظر اٹھی آواز تری آئی

ان مدھ بھری آنکھوں میں کیا سحر تبسم تھا

نظروں میں محبت کی دنیا ہی سمٹ آئی

شاعر: صوفی تبسم

Sao    Baar    Chaman   Mehka    Sao     Baar    Bahaar   Aai

Dunya   Ki    Wahi    Raonaq    Dil    Ki   Wahi   Tanhaai

 Yeh    Raat    Ki    Khaamoshi    Yeh   Aalam-e-Tanhaai

Phir    Dard    Utha   Dil    Men   Phir   Yaad    Tiri   Aai

 

Iss    Maosam-e-Gull    Hi    Say    Behkay    Nahen   Dewaanay

Saath    Abr-e-Bahaaran     K    Wo    Zulf    Bhi   Lehraai

 

Har    Dard-e-Muhabbat    Say    Uljha    Hay   Gham-e-Hasti

Kaya    Kaya    Hamen    Yaad    Aaya    Jab    Yaad    Tiri   Aai

 Jalwon    K    Tamannaai    Jalwon    Ko    Tarastay   Hen

Taskeen    Ko    Roen    Gay    Jalwon   K    Tamannaai

Dunya    Hi    Faqat    Meri    Haalat    Pe    Nahen   Chaonki

Kuchh   Teri    Bhi    Aankhon   Men    Halki    Si    Chamak   Aai

 Aoron     Ki    Muhabbat   K    Dohraaey    Hen   Afsaanay

Baat    Apni    Muhabbat   Ki    Honton    Pe    Nahen   Laai

 Wo    Mast    Nigaahen    Hen   Ya    Wajd    Men    Raqsaan   Hay

Tasneem    Ki    Lehron    Men    Firdous    Ki   Ranaai

 Simti    Hui    Aahon    Men    Jo    Aag    Sulagti   Hay

Behtay    Huay    Ashkon   Nay    Wo    Aag     Bhi   Bharrkaai

 

Phaili    Hen    Fazaaon    Men   Iss    Tarah   Tiri   Yaaden

Jiss    Samt    Nazar    Uthhi    Aawaaz   Tiri   Aai

I n    Madh    Bhari    Aankhon    Men    Kaya    Sahar   TABASUM   Tha

Nazron    Men    Muhabbat     Ki    Dunya   Hi   Simat    Aai

 Poet: Sufi   Tabassum

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -