نوازشریف کے خلاف غداری کا مقدمہ ، تھانہ شاہدرہ کے ایس ایچ او کا موقف بھی سامنے آ گیا 

نوازشریف کے خلاف غداری کا مقدمہ ، تھانہ شاہدرہ کے ایس ایچ او کا موقف بھی ...
نوازشریف کے خلاف غداری کا مقدمہ ، تھانہ شاہدرہ کے ایس ایچ او کا موقف بھی سامنے آ گیا 

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن )ن لیگ کے قائد نوازشریف کے خلاف لاہور کے علاقے شاہدرہ میں غداری اور ریاست کے خلاف بغاوت پر اکسانے کا مقدمہ درج کیا گیا اور اس حوالے سے اب لیگی رہنما محمد زبیر ، عطا تارڑ ایس ایچ او سے ملاقات کیلئے شاہدرہ پہنچ گئے ۔

تفصیلات کے مطابق لیگی رہنماﺅں کی جانب سے اپنے خلاف درج ہونے والے مقدمہ پر ایس ایچ او سے بات کی گئی ، محمد زبیر کا کہناتھا کہ سابق گورنر رہ چکا ہوں ، حکومتی آشیر باد کے بغیر مقدمہ درج نہیں ہو سکتا ،ایس ایچ او کا کہناتھا کہ ہمارے پاس درخواست آئی،ہم نے مقدمہ درج کیا، پولیس میرٹ پرتفتیش کرے گی،تعیناتی کو 2 روزہوئے،مجھ سے پہلے مقدمہ درج ہوا۔محمد زبیر کا کہناتھا کہ یہ پہلامقدمہ ہے جس میں ملزمان خودتھانے آئے،وزیراعظم کوہمارے خلاف مقدمات درج کرنےکاشوق ہے۔

یاد رہے کہ سابق وزیر اعظم اور پاکستان مسلم لیگ ن کے قائد میاں نواز شریف کے خلاف صوبائی دارالحکومت لاہور کے تھانہ شاہدرہ میں ’غداری‘ اور ’ریاست کے خلاف بغاوت پر ا±کسانے‘ کا مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔یہ مقدمہ بدر رشید نامی ایک شہری کی درخواست پر درج کیا گیا ہے۔ نواز شریف کے خلاف درج ہونے والی ایف ائی آر میں غداری، ریاست کے خلاف بغاوت پر ا±کسانے اور سائبر کرائم ایکٹ پیکا کی دفعات سمیت مجموعی طور پر 12 مختلف دفعات شامل کی گئی ہیں۔

ایف آئی آر میں تعزیرات پاکستان کی دفعات 120، 120 اے، 120 بی، 121، 121 اے (ریاست کے خلاف بغاوت پر اکسانا)، 123 اے، 124، 124 اے (غداری)، 153، 153 اے، 505 اور سائبر کرائم ایکٹ پیکا کی دفعہ دس بھی شامل ہے۔

لاہور کے تھانہ شاہدرہ میں نواز شریف کے خلاف درج ایف آئی آر میں درخواست گزار نے موقف اپنایا ہے کہ ’نواز شریف پاکستان کی اعلیٰ عدالتوں سے مجرم قرار پائے ہیں اور انھوں نے گذشتہ ماہ 20 ستمبر کو حزب اختلاف کی سیاسی جماعتوں کی آل پارٹیز کانفرنس اور یکم اکتوبر کو اپنی پارٹی کے اجلاس میں کی گئی تقاریر میں نہ صرف ملکی اداروں کو بدنام کیا ہے بلکہ عوام کو بغاوت پر اکسایا بھی ہے۔‘

مزید :

اہم خبریں -قومی -