سایوں سے لپٹ رہے تھے سائے |صوفی تبسم |

سایوں سے لپٹ رہے تھے سائے |صوفی تبسم |
سایوں سے لپٹ رہے تھے سائے |صوفی تبسم |

  

سایوں سے لپٹ رہے تھے سائے 

دل پھر بھی فضا میں جگمگائے 

بے صرفہ بھٹک رہی تھیں راہیں 

ہم نورِ سحر کو ڈھونڈ لائے 

یہ گردشِ روزگار کیا ہے 

ہم شام و سحر کو دیکھ آئے 

ہر صبح تری نظر کا پرتو 

ہر شام تری بھوؤں کے سائے 

ہے فصلِ بہار کا یہ دستور 

جو   آئے چمن میں مسکرائے 

کیا چیز ہے یہ فسانۂ دل 

جب کہنے لگیں تو بھول جائے 

تم ہی نہ سمجھ سکے مری بات 

اب کس کی سمجھ میں بات آئے 

سونی رہی انتظار کی رات 

اشکوں نے بہت دیے جلائے 

وہ دن جو بہارِ  زندگی تھے 

وہ دن کبھی لوٹ کر نہ آئے 

شاعر: صوفی تبسم

Saayon    Say   Lipatt   Rahay     Thay    Saaey

Dil    Phir    Bhi    Fazaa   Men   Jagmagaaey

 Be  Sarfa    Bhattak   Rahi   Then   Raahen

Ham    Noor-e-Sahar   Ko    Dhoond   Laaey

 

Yeh   Gardish-e-Rozgaar   Kaya   Hay

Ham   Sham-o-Shar    Ko   Dekh   Aaeey

 Har    Subh   Tiri    Nazar    Ka   Partao

Har    Shaam   Tiri    Bhawon    K   Saaey

 

Hay    Fasl-e-Bahaar    Ka    Yeh   Dastoor

Jo    Aaey    Chaman    Men   Muskaraaey

 Kaya    Cheez    Hay    Yeh   Fasaana-e-Dil

Jab    Kehnay    Lagen    To    Bhool   Jaaey

Tum   Hi    Na    Samajh    Sakay    Miri   Baat

Ab    Kiss    Ki    Samajh    Men    Baat   Aaey

Sooni    Rahi    Intezaar    Ki    Raat

Ashkon    Nay   Bahut    Diay    Jalaaey

 Wo    Din   Jo     Bahaar-e-Zindagi   Thay

Wo    Din    Kabhi    Laot    Kar    Na   Aaey

 

Poet: Sufi   Tabassm

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -