فتنے جب بھی اُٹھے بازاروں سے| ضمیر جعفری |

فتنے جب بھی اُٹھے بازاروں سے| ضمیر جعفری |
فتنے جب بھی اُٹھے بازاروں سے| ضمیر جعفری |

  

فتنے جب بھی اُٹھے بازاروں سے

وہ تراشے گئے اخباروں سے

ہم نہ کہتے تھے نہ رستے روکو

لوگ ٹکرا گئے دیواروں سے

زندگانی کی چتاپر ہم لوگ

رقص کرتے رہے تلواروں سے

وہ زمانہ بھی سروں پر آیا

بوجھ بڑھنے لگا دستاروں سے

اوس پینے کے دریچے سوکھے

آگ اٹھنے لگی گلزاروں سے

آن ہے اپنے لہو کی سوغات

بھیک مل جاتی ہے زرداروں سے

شاعر: ضمیر حسین جعفری

(مجموعۂ کلام: کھلیان؛سالِ اشاعت،1980)

Fitnay   Jab   Bhi   Uthay   Bazaaron   Say

Wo    Taraashay    Gaey    Akhbaaron   Say

Ham   Na   Kehtay   Thay    Na    Rastay   Roko

Log    Takraa    Gaey    Dewaaron   Say

Zindagaani    Ki   Chitaa   Par    Ham   Log

Raqs   Kartay    Rahay    Talwaaron   Say

Wo   Zamaana   Bhi    Saron    Par   Aaya

Bojh   Barrhnay   Laga    Dastaaron   Say

Aoss   Peenay   K    Dareechay   Sookhay

Aag   Uthanay   Lagi   Gulzaaron   Say

Aan    Hay    Apnay   Lahoo    Ki    Saoghaat

Bheek    Mill    Jaati    Hay    Zardaaron   Say

Poet: Zameer    Jafri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -