کیا سروکار اب کسی سے مجھے | ضیاجالندھری |

کیا سروکار اب کسی سے مجھے | ضیاجالندھری |
کیا سروکار اب کسی سے مجھے | ضیاجالندھری |

  

کیا سروکار اب کسی سے مجھے 

واسطہ تھا تو تھا تجھی سے مجھے 

بے حسی کا بھی اب نہیں احساس 

کیا ہوا تیری بے رخی سے مجھے 

موت کی آرزو بھی کر دیکھو ں

کیا امیدیں تھیں زندگی سے مجھے 

پھر کسی پر نہ اعتبار آئے 

یوں اتارو نہ اپنے جی سے مجھے 

تیرا غم بھی نہ ہو تو کیا جینا 

کچھ تسلی ہے درد ہی سے مجھے 

کتنا پرکار ہو گیا ہوں کہ تھا 

واسطہ تیری سادگی سے مجھے 

کر گئے کس قدر تباہ ضیاؔ 

دشمن اندازِ دوستی سے مجھے 

شاعر: ضیا جالندھری

(مجموعۂ کلام: سرِ شام؛سالِ اشاعت،1968)

Kaya    Sarokaar    Ab    Kisi    Say   Mujhay

Waasta     Tha   To    Tha    Tujhi    Say   Mujhay

Be   Hisi    Ka    Bhi   Ab    Nahen    Ehsaas

Kaya    Hua    Teri    Be  Rukhi    Say    Mujhay

Maot    Ki    Aarzu    Bhi    Kar   Dekhun

Kaya     Umeeden    Then    Zindagi    Say   Mujhay

Phir    Kisi   Par   Na     Aitbaar    Aaey

Yun    Utaaro    Na    Apnay   Ji    Say   Mujhay

Tera    Gham    Bhi    Na     Ho   To   Kaya     Jeena

Kuchh    Tasalli    Hay    Dard    Hi    Say   Mujhay

Kitna    Pukaar    Ho    Gaya    Hun    Keh   Tha

Waasta    Teri    Saadgi    Say     Mujhay

Kar    Gaey    Kiss    Qadar    Tabaah     ZIA

Dushman     Andaaz-e-Dosti    Say    Mujhay

Poet: Zia   Jalandhri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -