نگاہوں میں یہ کیا فرما گئی ہو | ضیاجالندھری |

نگاہوں میں یہ کیا فرما گئی ہو | ضیاجالندھری |
نگاہوں میں یہ کیا فرما گئی ہو | ضیاجالندھری |

  

نگاہوں میں یہ کیا فرما گئی ہو 

مری سانسوں کے تار الجھا گئی ہو 

در و دیوار میں ہے اجنبیت 

میں خود بھی کھو گیا تم کیا گئی ہو 

پریشاں ہو گئے تعبیر سے خواب 

کہ جیسے کچھ بدل کر آ گئی ہو 

تمنا ,  انتظار دوست کے بعد 

کلی جیسے کوئی مرجھا گئی ہو 

یہ آنسو   ,  یہ پشیمانی کا اظہار 

مجھے اک بار پھر بہکا گئی ہو 

ضیاؔ وہ زندگی کیا زندگی ہے 

جسے خود موت بھی ٹھکرا گئی ہو 

شاعر: ضیا جالندھری

(مجموعۂ کلام: سرِ شام؛سالِ اشاعت،1968)

Nigaahon    Men   Yeh    Kaya    Farmaa   Gai    Ho

Miri    Sanson    K   Taar   Uljhaa   Gai    Ho

Dar-o-Dewaar   Men    Hay   Ajnabiyat

Main    Khud   Bhi    Kho    Gaya    Tum    Kaya   Gai   Ho

Pareshaan    Ho     Gaey    Tabeer   Say   Khaab

Keh    Jaisay    Kuchh    Badall    Kar    Aa   Gai    Ho

Tamanna , Intezaar-e-Dost   K   Baad

Kali    Jasiay    Koi    Murjhaa   Gai    Ho

Yeh    Aansu   ,   Yeh    Pashemaani    Ka    Izhaar

Mujahy    Ik    Baar   Phir    Behkaa   Gai    Ho

ZIA    Wo    Zindagi    Kaya     Zindagi   Hay

Jisay    Khud    Maot    Bhi   Thukraa    Gai    Ho

Poet: Zia    Jalandhri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -