چھیڑی بھی جو رسم و راہ کی بات | ضیاجالندھری |

چھیڑی بھی جو رسم و راہ کی بات | ضیاجالندھری |
چھیڑی بھی جو رسم و راہ کی بات | ضیاجالندھری |

  

چھیڑی بھی جو رسم و راہ کی بات 

وہ سن نہ سکے نگاہ کی بات 

ہر لحظہ بدل رہے ہیں حالات 

مجھ سے نہ کرو نباہ کی بات 

کہتے ہیں تری مژہ کے تارے 

خود میری شبِ سیاہ کی بات 

اب ہے وہ نگہ نہ وہ تبسم 

کچھ اور تھی گاہ گاہ کی بات 

کیا یاد نہ آئے گا یہ انجام 

کس دل سے کریں گے چاہ کی بات 

شاعر: ضیا جالندھری

(مجموعۂ کلام: سرِ شام؛سالِ اشاعت،1968)

Chhairri    Jo    Rasm-o- Raah   Ki    Baat

Wo   Sun    Na   Sakay   Nigaah   Ki    Baat

Har   Lehza    Badal    Rahay    Hen    Halaat

Mujh   Say   Na    Karo    Nibaah    Ki      Baat

Kehtay    Hen   Teri    Muzaa    K   Taaray

Khud    Meri    Shab-e-Siyaah    Ki      Baat

Ab    Hay    Wo    Nigah   ,   Na    Wo   Tabassum

Kuchh   Aor    Thi    Gaah   Gaah   Ki    Baat

Kaya    Yaad   Na    Aaey    Ga   Yeh   Anjaam

Kiss    Dil    Say   Karo    Gay    Chaah    Ki    Baat

Poet: Zia    Jalandhri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -