پیپلز پارٹی ،تحریک انصاف ،جماعت اسلامی سمیت 7جماعتوں کا بلدیاتی انتخابات ملکر لڑنے کا فیصلہ

پیپلز پارٹی ،تحریک انصاف ،جماعت اسلامی سمیت 7جماعتوں کا بلدیاتی انتخابات ...

لاہور(خبر نگار خصوصی) میاں منظور احمد وٹو صدر پیپلز پارٹی سنٹرل پنجاب کی دعوت پر پاکستان تحریک انصاف کے رہنما چوہدری سرور، جماعت اسلامی کے رہنما لیاقت بلوچ، پاکستان عوامی تحریک کے نواز گنڈا پور، جمعیت علمائے پاکستان کے اعجاز ہاشمی، سنی اتحاد کونسل کے جواد الحسن کاظمی اور مجلس وحدت المسلمین کے اسد عباس نقوی نے گزشتہ روز صدر پیپلز پارٹی پنجاب کی رہائش گاہ پر ملاقات کی پیپلزپارٹی جنوبی پنجاب کے صدرمخدوم احمد محمود بھی اجلاس میں موجود تھے جن کوخصوصی دعوت پر مدعو کیا گیا تھا۔اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے میاں منظور احمد وٹو نے فیصلوں کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ سب شرکاء کا اتفاق ہے کہ وہ کاشتکاروں کے ساتھ ملکر جدوجہد کریں گے اور انکے مطالبات تسلیم ہونے تک ان کے ساتھ کھڑے رہیں گے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کی کسان دشمن پالیسیوں کی بابت کسان برادری معاشی طور پر تباہ ہو گئی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اپوزیشن رہنماؤں نے تاجروں کیساتھ مکمل اظہار یکجہتی کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ وِد ہولڈنگ ٹیکس کو فورًا واپس لیا جائے کیونکہ ان کے کاروبار پہلے ہی جی ایس ٹی اور مہنگی بجلی کی وجہ سے تباہ ہو گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ شرکاء اس بات پر متفق ہیں کہ ماڈل ٹاؤن سانحہ کی جوڈیشل کمیشن کی رپورٹ کو منظر عام پر لایا جائے تاکہ مجرموں کو قانون کے کٹہرے میں لا کر ان کو قرار واقعی سزا دی جائے۔ انہوں نے کہا کہ سیاسی قائدین اس پر بھی متفق ہیں کہ الیکشن کمیشن کے اراکین کو فورًا مستعفیٰ ہو جانا چاہیے کیونکہ وہ متنازع ہو گئے ہیں اس لیے انکی زیر نگرانی مقامی حکومتوں کے آئندہ ہونیوالے انتخابات بھی متنازعہ ہو جائیں جس سے مقامی حکومتوں کے نظام کو شدید خطرات لاحق ہونگے۔ انہوں نے کہا کہ یہ بھی فیصلہ کیا گیا ہے کہ تمام اپوزیشن کی جماعتیں آئندہ انتخابات میں آپس میں تعاون کریں گی اور ضلعی سطح پر ان کو اجازت ہو گی کہ وہ مقامی حالات کے پیش نظر دوسری اپوزیشن پارٹیوں سے سیٹ ایڈجسٹمنٹ کر سکتی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ سیاسی قائدین اس وقت ہر حلقے میں 2کروڑ روپے کے ترقیاتی فنڈز جاری کر کے حکومت پری پول دھاندلی کی مرتکب ہوئی ہے۔انہوں نے الیکشن کمیشن سے مطالبہ کیا کہ وہ اس کا نوٹس لے اور جہاں کسی حلقے میں بھی ترقیاتی فنڈز خرچ ہو رہے ہوں وہاں پاکستان مسلم لیگ (ن) کے امیدوار کو نااہل قرار دیا جائے۔

مزید : صفحہ اول


loading...