آج پاکستان کو 65ء کے جذبے کی ضرورت ہے ، صدرالدین ہاشوانی

آج پاکستان کو 65ء کے جذبے کی ضرورت ہے ، صدرالدین ہاشوانی

دبئی (خصوصی رپورٹ)معروف پاکستانی تاجر و صنعتکار اور ہاشو گروپ کے چئیرمین صدر الدین ہاشوانی نے کہا ہے کہ آج پاکستان کو 1965ء کے جذبے کی جس قدر ضرورت ہے اس سے پہلے کبھی نہ تھی۔کیونکہ آج وطن عزیز کو سرحدوں کے اندر اور باہر دونوں جگہ بزدل اور سازشی دشمنوں کا سامنا ہے۔تاہم یہ امر پوری قوم کے لئے باعث اطمینان ہے کہ انکی بہادر مسلح افواج کی دفاع وطن کے ضمن میں تیاری اور صلاحیت کسی بھی شک و شبہ سے بالاتر ہے۔انہوں نے ان خیالات کا اظہار یوم دفاع پاکستان کے موقع پر اپنے پیغام میں کیا ہے۔صدر الدین ہاشوانی کا کہنا تھا کہ ٹھیک پچاس برس قبل آج کے دن غیور پاکستانی مسلح افواج نے جس جرات و بہادری کے ساتھ ارض پاک کا دفاع کرتے ہوئے جب اپنے سے کئی گنا بڑے دشمن کے دانت کھٹے کئے تو ساتھ ہی عزم و ایثار کی انمٹ داستانیں بھی رقم کیں۔ جنگ ستمبر کے وہ 17دن ہماری تاریخ کے عظیم ترین دنوں میں سے ہیں کیونکہ اس دوران نہ صرف اس دھرتی کے سپوتوں نے اپنی جانوں کے نذرانے دیکر اسکا دفاع کیا ساتھ ہی پوری قوم نے بھی ایک سیسہ پلائی دیوار کی طرح اپنی افواج کی پشت پناہی کی۔یہی بات اس جنگ کو خاص بنا دیتی ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کے خلاف ہمہ وقت سازشوں میں مصروف رہنے والا ہمارا دشمن آج بھی اپنے مذموم عزائم کی بار آوری کے لئے اندرون و بیرون ملک وطن عزیز کے خلاف منصوبہ بندی میں مصروف ہے اور اب تو تمام دستیاب ثبوتوں کی روشنی میں شک کی کوئی گنجائش نہیں کہ ہمارا دشمن کل کی طرح آج بھی ہماری ترقی و خوشحالی کو سبوتاژ کرنے کے لئے اندرون ملک فساد اور خون خرابہ بپا کئے رکھنے کے لئے اپنے تمام تر وسائل استعمال کر رہا ہے۔مگر دوسری جانب ہماری بہادر افواج، قانون نافذ کرنے والے اداروں اور سیکورٹی ایجنسیوں کے ملک دشمنوں کے خلاف جاری آپریشن اور ان میں ملنے والی تاریخی کامیابیاں یقیناًلائق تحسین اور پوری قوم کے لئے باعث صد اطمینان ہیں۔صدر الدین ہاشوانی کا یہ بھی کہنا تھا کہ آج جنگ ستمبر سے پچاس برس بعدکا پاکستان ایک ایٹمی ملک ہے جس کے20کروڑ عوام اس مادر وطن کے اندرون و بیرون ملک دشمنوں کے خلاف یک جان اور اپنی مسلح افواج کے پشتی بان ہیں۔ اب پاکستان کے دشمنوں کو متنبہ ہونا چاہیے کہ یہ قوم انکی تمام سازشوں کو خاک میں ملانے کے لئے تیار ہے۔ اور اگر وہ اب بھی باز نہ آئے تو انہیں ایسا سبق سکھایا جائے گا کہ انکی آنے والی نسلیں یاد رکھیں گی۔

مزید : صفحہ آخر


loading...