واشنگٹن،ایسا شخص جسے دو منہ والے جانور جمع کرنے کا انوکھا شوق ہے

واشنگٹن،ایسا شخص جسے دو منہ والے جانور جمع کرنے کا انوکھا شوق ہے
واشنگٹن،ایسا شخص جسے دو منہ والے جانور جمع کرنے کا انوکھا شوق ہے

  


واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) دنیا میں ہر کسی کا کوئی نہ کوئی شوق ہوتا ہے جیسا کہ کچھ لوگ سکے جمع کرتے ہیں اور کچھ لوگ ٹکٹس۔ امریکہ میں ٹوڈ رے نامی ایک شخص کودو منہ والے جانور جمع کرنے کا انوکھا شوق ہے اور وہ اپنے اس شوق کی تکمیل پر اب تک ہزاروں ڈالر خرچ کر چکا ہے۔ دیگر جانوروں کے ساتھ ساتھ اس کے پاس دو منہ والے کئی اقسام کے سانپ بھی ہیں۔ ان سانپوں میں سب سے خوبصورت ایک البائنو(جس کی قدرتی رنگت دودھ کے جیسی سفید اور سرخی مائل ہوتی ہے، انسان بھی البائنو ہوتے ہیں جن کے بال بھی قدرتی طور پر سفید ہوتے ہیں )ہے جس کا نام میڈوسا(Medusa) ہے۔ میڈوسا کی عمر 4سال ہے اور یہ تین فٹ لمبا ہے۔ یہ امریکی ریاست کیلیفورنیا میں پیدا ہوا جہا ں سے ٹوڈ رے نے 50 ہزار ڈالر (50 لاکھ پاکستانی روپے)جیسی بھاری رقم کے عوض اسے اس کے مالک سے خریدا۔جہاں میڈوسا اپنی رنگت کی وجہ سے خوبصورت ہے وہیں اس کی اور بھی کئی خصوصیات ہیں۔ ٹوڈ رے کا کہنا ہے کہ دیگر دو منہ والے سانپوں کو کھانا کھلا نا کوئی مسئلہ نہیں لیکن میڈوسا کو اگر کھانے کے لیے کسی چیز کا ایک ہی ٹکڑا دیا جائے تو اس کے دونوں منہ اس پر جھپٹ پڑتے ہیں اور کھانا شروع کر دیتے ہیں۔ دونوں طرف سے کھاتے ہوئے جب دونوں منہ ایک جگہ آ جاتے ہیں تو اس کا ایک منہ اپنے ہی دوسرے منہ کو کھانے کی کوشش کرتا ہے۔ٹوڈرے نے بتایا کہ جب پہلی بارمیں میڈوسا کو لے کر گھر آیا اور اسے کھانے کے لیے ایک چوہا دیا تو مجھے یہ اندازہ نہیں تھا کہ یہ سانپ اس طرح خود کو ہی کھانے کی کوشش کرے گا۔میں نے جب دیکھا کہ اس کے دونوں منہ چوہے کو نگلتے ہوئے درمیان میں پہنچے اور اس سے قبل کہ ایک منہ دوسرے کو نگلتا میں نے ایک چھری سے چوہے کے دو ٹکڑے کر دیئے۔ اس کے بعد میں ہمیشہ میڈوسا کو کھانے کے لیے دو چوہے دیتا ہوں تاکہ اس کے دونوں منہ اپنا اپنا چوہا کھائیں اور ایک دوسرے پر حملہ آور نہ ہوں۔

مزید : صفحہ آخر


loading...