بیگناہ کشمیریوں کو لائن آف کنٹرول کے قریب لا کر شہید کئےجانےپر افسران سمیت چھ بھارتی فوجیوں کا کورٹ مارشل ،عمر قید کی سزا

بیگناہ کشمیریوں کو لائن آف کنٹرول کے قریب لا کر شہید کئےجانےپر افسران سمیت ...
بیگناہ کشمیریوں کو لائن آف کنٹرول کے قریب لا کر شہید کئےجانےپر افسران سمیت چھ بھارتی فوجیوں کا کورٹ مارشل ،عمر قید کی سزا

  


نئی دہلی (مانیٹرنگ ڈیسک)مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی بربریت کھل کر سامنے آ گئی اور بھارتی پراپیگنڈا ایک مرتبہ پھر دم توڑ گیا ۔بے گناہ کشمیریوں کو لائن آف کنٹرول کے قریب لا کر شہید کئے جانے پر بھارتی فوج کے دو افسران سمیت 6اہلکاروں کا کورٹ مارشل کرتے ہوئے عمر قید کی سزا دے دی گئی ہے ۔ تفصیلات کے مطابق ماشل جعلی انکاﺅنٹر کیس میں بھارتی فوج کی شمالی کمانڈ نے دو افسران سمیت چھ اہلکار وں کو عمر قید کی سزا کا فیصلہ سنا دیا ہے ۔ انڈین ایکسپریس کے مطابق کشمیر وادی میں یہ اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ ہے جس میںبے گناہ کشمیریوں کو قتل کئے جانے پر فوجی اہلکاروں کو سزا سنائی گئی ہو ۔

بھارتی فوج کی شمالی کمانڈ کے ترجمان نے میڈیا کو بتایا ہے کہ کرنل دنیش پٹھانیہ ، کیپٹن اوپیندرا ،حوالدار دیویندرکمار، لانس نائیک لکھمی، لانس نائیک ارون کماراور رائفل مین عباس حسین سزا پانے والوں میں شامل ہیں ۔2010میں بارہ مولہ کے ندیہال گاﺅں کے شہزاد احمد ، ریاض احمد اور محمد شفیع کو بہلا پھسلا کر لائن آف کنٹرول کے قریب ماشل سیکٹرلے جا کر جعلی انکاﺅنٹر میں شہید کیا گیا تھا ۔ بھارتی فوج کے ان درندہ صفت اہلکاروں نے تینوں کشمیری نوجوانوں کو بہتر روزگار اور اس کے عوض اچھی رقم کا جھانسہ دیا تھا تاہم لائن آف کنٹرول کے قریب سوناپنڈی پوسٹ پر انہیں شہید کرنے کے بعد انہیں پاکستانی دہشتگرد قرار دے دیا تھا ۔ یاد رہے کہ ان بے گناہ نوجوان کشمیریوں کی شہادت کے بعد وادی بھر میں احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ شروع ہو گیا تھا جس کے باعث 123افراد مارے گئے تھے جس پر بھارتی فوج کو معاملے کی انکوائری کرنا پڑی۔

مزید : بین الاقوامی /اہم خبریں


loading...