نیازی کمپنی کا ٹیکس پاکستان میں چھپایا ،بیرون ملک جمع کرایاگیا ،بیرسٹر ظفراللہ

نیازی کمپنی کا ٹیکس پاکستان میں چھپایا ،بیرون ملک جمع کرایاگیا ،بیرسٹر ...

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)مسلم لیگ ن کے رہنما دانیال عزیز نے پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا پاناما لیکس میں وزیراعظم نواز شریف کا نام نہیں۔ وزیراعظم کیخلاف ریفرنس کا پاناما پیپرز سے کوئی تعلق نہیں صرف اخباری خبر پر وزیراعظم کے خلاف ریفرنس دائر کیا گیا۔ ان کا مزید کہنا تھا جمع کرائے گئے ریفرنس میں رتی برابر ثبوت نہیں تھے۔ پاسپورٹ سائز تصویر لگا دینا کہاں کا ثبوت ہے کہ کسی نے کچھ غلط کیا ہے۔ دانیال عزیز نے کہا میں اپیل کرتا ہوں سیاسی تبصرہ کرنے کی بجائے ریفرنسز کو ایک نظر پڑھ لیا جائے۔ انہوں نے کہا پہلے 35 پنکچر کا بھی جھوٹ بولا گیا تھا جب ثبوت مانگے جاتے ہیں تو فرار ہو جاتے ہیں۔ پورے اسلام آباد کو انہوں نے یرغمال بنایا ہوا تھا۔مسلم لیگ ن کے رہنما طلال چودھری نے بات کرتے ہوئے کہا کراچی کے حالات میں بہتری کا کریڈٹ وزیراعظم کو جاتا ہے۔ حالات کی بہتری کا کریڈٹ لینے والے یاد رکھیں ان کا متحدہ کیساتھ اتحاد تھا۔ ماضی میں آپ متحدہ سے ہی اجازت لیکر کراچی میں جلسہ کرتے تھے۔ ان کا مزید کہنا تھا آپ چوری کرتے رنگے ہاتھوں پکڑے گئے آپ کا لال پیلا ہونا بنتا ہے۔ خان صاحب ہم ریفرنس کو منطقی انجام تک پہنچائیں گے۔ مرضی کا نتیجہ نہ آئے گالی اور آ جائے تو پھر واہ واہ کرتے ہیں۔ طلال چودھری نے شیخ رشید کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا پنڈی کا سیاسی بونا اپنا قد بڑھانے کیلئے نواز شریف کو چیلنج دے رہا ہے۔ شیخ رشید اسمبلی میں اسپیکر کے پاؤں اور باہر آ کر الزام لگاتے ہیں۔اس موقع پر بیرسٹر ظفر اللہ اور معاون خصوصی برائے قانون و انصاف نے بات کرتے ہوئے کہا عمران خان نے جو نیازی سروس قائم کی وہ 2015 تک ڈکلیئر نہیں کی جبکہ نیازی سروس کی پہلی درخواست 1993 میں دی گئی۔ مشرف کی ٹیکس ایمنسٹی اسکیم میں عمران نے فلیٹ ظاہر کیا اور قیمت 20 لاکھ بتائی۔ عمران نے فلیٹ کی قیمت 20 لاکھ ٹیکس چھپانے کے لیے بتائی۔ بیرسٹر ظفراللہ نے کہا ہے کہ عمران خان کی نیازی کمپنی کا ٹیکس 2005 تک پاکستان میں چھپایا گیا، نیازی کمپنی کا ٹیکس برطانیہ اور نیو جرسی میں ہر 6ماہ بعد جمع کرایاگیا۔تفصیلات کے مطابق پریس کانفرنس کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے رہنما بیرسٹر ظفراللہ نے کہا ہے کہ سپیکر نے صحیح غلط کا فیصلہ نہیں کرنا ہوتا،جوخودشیشے کے مکان میں رہتے ہوں انھیں دوسروں پرپتھراؤنہیں کرناچاہیے،سات کروڑ کے جعلی شیئر مالی اور باورچی کے نام پر خریدے گئے۔انہوں نے کہا ہے کہ جہانگیر ترین کے جمع شدہ ٹیکس خود ہی ایک دوسرے کو غلط ثابت کر رہے ہیں۔

بیرسٹر ظفراللہ

مزید :

علاقائی -