جنگِ ستمبر اور مسئلہ کشمیر(2)

جنگِ ستمبر اور مسئلہ کشمیر(2)
 جنگِ ستمبر اور مسئلہ کشمیر(2)

  



بھارتی فوج کے کمانڈر۔ جنرل چوہدری پورے یقین اوراعتماد کے ساتھ اپنے افسروں اور جوانوں کو باور کرواچکے تھے کہ جشنِ فتح لاہور مال روڈ پر منایا جائے گا او ر 6ستمبر صبح کا ناشتہ جمخانہ لاہور میں کیا جائے گا ۔یہ حملہ اچانک تھا اس لئے۔۔۔ بہت ہی تباہ کن اورخطرناک تھا۔ اہم بات یہ ہے کہ حملے کے وقت واہگہ پوسٹ پر صرف رینجرز تعینات تھے اس کے بعد جب یہاں پاک فوج کے افسر و جوان پہنچے تو وہ دشمن کے لئے ناقابل تسخیر چٹان ثابت ہوئے۔ جرأت ایمانی اور جذبہ شہادت سے لبریز پاک فوج کے جوان کئی دن تک مسلسل آرام کئے اور کھائے پئے بغیر محاذوں پر ڈٹے رہے ، دادِ شجاعت دیتے اور دشمن کو نشان عبرت بناتے رہے ۔ پاک فوج کے جوانوں کی وردیاں پھٹ گئیں،جل گئیں ،جسم زخموں سے چور ہو گئے ،دھول میں اٹ گئے لیکن کوئی جوان محاذ چھوڑنے اور آرام کرنے کے لئے تیار نہ تھا ۔اسی طرح چونڈہ کے محاذ پر بھی تاریخ کا عظیم معرکہ لڑاگیا اور چونڈہ 600 بھارتی ٹینکوں کا قبرستان ثابت ہوا۔کہتے ہیں کہ جنگوں میں اسلحے سے اسلحہ اور لوہے سے لوہا ٹکراتا ہے تب کشتوں کے پشتے لگتے اور فتح وشکست کے فیصلے ہوتے ہیں۔لیکن 65ء کی جنگ میں بھارتی فوج کا اسلحہ، بارود،توپیں،ٹینک اور طیارے۔۔۔پاک فوج کے جوانوں اور جسموں سے نہیں۔۔۔ان کے جذبہ ایمان اور شوق شہادت سے ٹکرائے اور پاش پاش ہوئے ۔پاک فوج کے جوانوں کی طرح عوام کے جذبات بھی بے مثال تھے۔خندقیں کھودی جاتی ہیں پناہ اور حفاظت کے لئے لیکن لاہوریے بھی کمال تھے کہ جب بھارت کے جنگی جہاز پاکستانی حدود میں داخل ہوتے تو زندہ دلانِ لاہور خندقوں اور پناہ گاہوں میں دبکنے کی بجائے باہر نکل آتے بھارتی طیاروں کی طرف ڈنڈے لہراتے جب پاکستانی شاہین بھارتی گدھوں پر لپکتے جھپٹتے۔۔۔ تو لوگ بیساختہ نعرہ تکبیر بلند کرتے۔65ء کی جنگ میں پاک فوج کے جذبہِ شہادت، لوگوں کی شجاعت کو دنیا نے تسلیم کیا بڑے بڑے عالمی جنگی وقائع نگاریہ کہنے پر مجبور ہو گئے کہ پاکستانی قوم کا دنیا کی کوئی قوم مقابلہ نہیں کرسکتی۔ پہلے ذکر ہوچکا ہے کہ بھارت اس جنگ سے دو مقاصد حاصل کرنا چاہتا تھا ۔

اولاً۔۔۔تحریک آزادی کشمیر کا خاتمہ۔

ثانیاً۔۔۔پاکستان پر قبضہ۔

یہ بات بالکل عیاں ہے کہ بھارت دونوں مقاصد حاصل کرنے میں بری طرح ناکام رہا اور اب بھی ناکام ہے۔ جنگ کے بعد پاکستان کو پہلے سے زیادہ دنیا میں وقار ومقام حاصل ہوااور یہ ملک اسلامی دنیا کی پہلی ایٹمی طاقت بن گیا۔ یہاں تک کہ وہ قوتیں جو ہر دو سال بعد پاکستان کے ٹوٹنے کی پشین گوئی کیا کرتی تھیں وہ خود اپنی شکست کے زخم چاٹ رہی ہیں۔جہاں تک تحریک آزادی کشمیر کا تعلق ہے وہ بھی پہلے سے زیادہ مضبوط وتوانا ہوچکی ہے۔باوجود اس کے کہ اس وقت مقبوضہ جموں کشمیر بھارتی ظلم آخری حدوں کو چھورہاہے،دوماہ سے کرفیو جاری ہے، سو سے زائد افرادشہید اور ہزاروں زخمی ہوچکے ہیں، بچوں اور نوجوانوں کو اندھا، اپاہج اور معذور کیا جا رہا ہے۔

چار ستمبر کو بھارتی وفد کی آمد پر مقبوضہ کشمیر میدانِ جنگ بن گیا۔ حریت کانفرنس کے قائد ین نے بھارتی وفد سے ملنے اور پاکستان کے بغیر کسی بھی قسم کے مذاکرات سے انکار کر دیا۔ جواب میں بھارتی فوج نے ظلم کی انتہا کر دی، صرف ایک دن میں چھ سو افراد پیلٹ گن کے چھروں سے زخمی کر دئیے گئے۔ لیکن تمام تر ظلم کے باوجود وہاں کھلے عام پاکستان کے پرچم لہرائے اور پاکستان زندہ باد کے نعرے لگائے جا رہے ہیں۔ ہمارے قابل قدر بزرگ قائد سید علی گیلانی،سید شبیر شاہ، میر واعظ عمر فاروق،یٰسین ملک،ہماری قابل احترام بہن آسیہ اندرابی، حریت کانفرنس کے دیگر قائدین ،کشمیری عوام پوری طرح یکسو اور آزادی کی منزل کی طرف رواں دواں ہیں ، ان کے دلوں میں سے آزادی کا جذبہ اورپاکستان کی محبت ذرا بھی کم نہیں ہوئی۔کشمیری قوم کی قربانیوں کا نتیجہ ہے کہ اب بھارت میں مسئلہ کشمیر کے حوالے سے احتجاج ہورہا ہے۔

سچی بات یہ کہ65ء کی جنگ میں پاکستان کو شاندار اور تاریخی فتح حاصل ہوئی تھی۔گو کہ مقابلے میں دشمن بہت بڑا تھا لیکن وہ ذلیل وخوار ہوا تھا۔موجودہ حالات کے تناظر میں ہمیں اس بات پر بھی غور کرنا ہو گا کہ1965ء کے موقع پر ہمیں فتح کیسے ملی؟ ہم سے کئی گنا بڑا دشمن کیوں کر ناکام ہوا؟ اس تاریخی فتح کا ماحاصل اگر دولفظوں میں بیان کیا جائے تو وہ ہے نظریہ پاکستان کے ساتھ وابستگی اور پختگی ۔جی ہاں۔۔۔ لا الہ الا اللہ محمد الرسول اللہ۔۔۔ کا نظریہ جس کی بدولت ہمارے بزرگوں نے انگریز اور ہندؤوں کو شکست فاش سے دوچارکر کے پاکستان حاصل کیا تھا۔صدر ایوب خان نے6 ستمبرکی صبح اپنی نشریاتی تقریر میں قوم کو ا سی نظریہ کی دعوت دیتے اور ہندؤوں کو للکارتے ہوئے کہا تھا’’میری قوم کے بہادر جوانو۔۔۔ لاالہ الا اللہ۔۔۔پڑھتے چلو آگے آگے بڑھتے چلو‘‘پھر دنیا نے دیکھا ہماری قوم سیسہ پلا ئی دیواربن گئی، اختلافات ختم ہو گئے،جرائم مٹ گئے ،راہزن محافظ ونگہبان بن گئے،بچے،بوڑھے،جوان ،مائیں بہنیں اور بیٹیاں سب وطن کی حفاظت پر کٹ مرنے کے لئے تیارہوگئے۔آج ایک بار پھر ہمیں خطرات کا سامنا ہے، دشمن ہمیں مٹاڈالنے کے خواب دیکھ رہا ہے۔پاکستانی قوم اور بہادر فوج 65ء میں اپنے وطن کے دفاع سے غافل تھی اور نہ آج غافل ہے۔آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے مودی اور ’’را‘‘کی پاکستان کے خلاف جارحیت کو ناکام بنانے کے عزم کااظہار کرکے ایوب خان کی6ستمبر کی تقریر کی یاد تازہ کردی اور پوری قوم میں ولولہِ تازہ پھونک دیا ہے۔ ان حالات میں اسلحہ کی تیاری ،حفاظتی ودفاعی اقدامات اور دشمن کی سازشوں کا توڑ اپنی جگہ لیکن ہماری اصل تیاری۔۔۔نظریہ پاکستان،اسلام اور کلمہ توحید کے ساتھ وابستہ رہنے اوراتحاد واتفاق کی لڑی میں پروئے رہنے میں ہے۔(ختم شد)

مزید : کالم