حکومت بھارت اور بنگلہ دیش سے سفارتی تعلقات ختم کر کے سفیروں کو واپس بلائے،بنگلہ دیش میں پھانسیوں پر حکمرانوں کی خاموشی مجرمانہ غفلت ہے :لیاقت بلوچ

حکومت بھارت اور بنگلہ دیش سے سفارتی تعلقات ختم کر کے سفیروں کو واپس ...
 حکومت بھارت اور بنگلہ دیش سے سفارتی تعلقات ختم کر کے سفیروں کو واپس بلائے،بنگلہ دیش میں پھانسیوں پر حکمرانوں کی خاموشی مجرمانہ غفلت ہے :لیاقت بلوچ

  

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) جماعت اسلامی پاکستان کے سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ پاکستان بھارت اور بنگلہ دیش سے سفارتی تعلقات ختم کر کے اپنے سفیروں کو واپس بلائے، عالمی محاذ پر بنگلہ دیش میں قتل عام اور سفاکی کے خلاف آواز بلند کی جائے، سہ فریقی معاہدے کی خلاف ورزی پر پاکستان عالمی عدالت انصاف میں جائے،جماعت اسلامی بنگلہ دیش دیگر سیاسی قوتوں کے ساتھ مل کر بنگلہ دیش کو بھارت کی کالونی بنانے کے راستے میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے،بنگلہ دیش ،بھارت اور پاکستان کے درمیان ہونے والے سہہ فریقی معاہدے کی بنگلہ دیش یکطرفہ طور پر خلاف ورزی کر رہا ہے، عالمی محاذ پر بنگلہ دیش میں قتل عام اور سفاکی کے خلاف آواز بلند کی جائے اور سہ فریقی معاہدے کی خلاف ورزی پر پاکستان عالمی عدالت انصاف میں جائے8 ستمبر کو بنگلہ دیش میں جماعت اسلامی کے قائدین کو ہونے والی پھانسیوں پر حکومتی خاموشی کے خلاف وزیراعظم سیکرٹریٹ کے سامنے احتجاجی دھرنا دیں گے،بنگلہ دیش میں ہونے والی پھانسیوں پر حکمرانوں کی خاموشی قومی سلامتی کے خلاف اقدام ہو گا۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے لیاقت بلوچ نے کہا کہ بنگلہ دیش میں جماعت اسلامی کے قائدین کو ہونے والی پھانسیوں اور اس پر پاکستان کے حکمرانوں کی مکمل طور پر بے حسی اور مجرمانہ غفلت و خاموشی کے خلاف وزیراعظم سیکرٹریٹ کے سامنے احتجاجی دھرنا دیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ مسئلہ کشمیر اس وقت انتہائی اہم موڑ پر ہے۔ کرپشن کے حوالے سے عدالتی کمیشن کا نہ بننا بھی اہم ترین مسئلہ ہے اور کراچی میں پاکستان کے خلاف ہرزہ سرائی بھی قوم کی پریشانی کا باعث ہے لیکن ان تمام امور کے ساتھ ساتھ بھارت کا پاکستان کے خلاف عزائم اور سازشیں سب کے سامنے ہیں۔ بھارت بنگلہ دیش کو کٹھ پتلی بنا کر اپنے عزائم کی تکمیل چاہتا ہے۔ لیاقت بلوچ نے کہا کہ ہم نے اسلام آباد میں بنگلہ دیش کے سفارتخانے اور بے حسی کی آماجگاہ بنی ہوئی وزارت خارجہ کے باہر احتجاج کی اجازت مانگی تھی جو ہمیں نہیں دی گئی جس کے بعد ہم نے مجبوراً وزیراعظم سیکرٹریٹ کے باہر دھرنے کا اعلان کیا ہے، یہ ہمارا آئینی و جمہوری حق ہے اور پرامن رہنا، قانون کو ہاتھ میں نہ لینا ہم اپنی قومی ذمہ داری سمجھتے ہیں۔ بھارتی حکومت اور اس کی خفیہ ایجنسی ’’را‘‘ کے اہلکار پاکستان کی سلامتی کے خلاف ہر مکروہ کھیل کھیل رہے ہیں،اس پر سیاسی و عسکری قیادت نہ سمجھ آنے والی خاموشی اختیار کئے ہوئے ہے۔

مزید :

اسلام آباد -