امریکہ کے بعد ایک اورملک چین کے خلاف کھل کر سامنے آگیا، ہمسایہ ممالک کو مقابلے کیلئے ہتھیاروں سے لیس کردیا

امریکہ کے بعد ایک اورملک چین کے خلاف کھل کر سامنے آگیا، ہمسایہ ممالک کو ...
امریکہ کے بعد ایک اورملک چین کے خلاف کھل کر سامنے آگیا، ہمسایہ ممالک کو مقابلے کیلئے ہتھیاروں سے لیس کردیا

  

ٹوکیو (نیوز ڈیسک) بحیرہ جنوبی چین میں جاری کشیدگی کو کم کرنے کی بجائے جاپان نے ایک ایسا قدم اٹھالیا ہے جس کا نتیجہ صورتحال میں سنگین خرابی کی صورت میں سامنے آئے گا کیونکہ اس کی جانب سے فلپائن کو جنگی بحری جہاز اور ہوائی جہاز فراہم کرنے کا فیصلہ کرلیا گیا ہے، جنہیں چینی بحری جہازوں کی نگرانی کے لئے استعمال کیا جائے گا۔

انڈین ایکسپریس کی رپورٹ کے مطابق جاپانی وزیراعظم شنزو آبے نے اس بات پر رضامندی ظاہر کردی ہے کہ فلپائن کو بحری نگرانی کے لئے دوبڑے بحری جہاز اور پانچ ہوائی جہاز دئیے جائیں گے۔ بحیرہ جنوبی چین کے بیشتر علاقے پر چین اپنی خود مختاری کا دعویدار ہے جبکہ اس کے مقابلے میں فلپائن اور چند دیگر ممالک بھی امریکہ کی حمایت کے ساتھ اس سمندر پر خودمختاری کا دعویٰ کررہے ہیں۔

سعودی عرب اور روس کے درمیان وہ سب سے بڑا معاہدہ ہوگیا جس کی کسی کو توقع نہ تھی، تفصیلات ایسی کہ پاکستانیوں کو بالکل بھی پسند نہ آئیں گی کیونکہ۔۔۔

فلپائن نے عالمی ثالثی عدالت میں چین کے خلاف مقدمہ بھی دائر کیا گیا جس کا فیصلہ فلپائن کے حق میں سنادیا گیا ہے۔ اس فیصلے کے بعد فلپائن چین پر دباﺅ ڈالنے کی کوشش جاری رکھے ہوئے ہے اور جاپان سے بحری اور ہوائی جہازوں کا حصول بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔

جاپانی وزیراعظم اور نومنتخب فلپائنی صدر نے ایک ملاقات کے دوران باہمی تعاون کو فروغ دینے اور خصوصاً بحیرہ جنوبی چین کے تنازعے کے حل کے لئے مشترکہ کوششوں پر اتفاق کیا۔ چین کی جانب سے پہلے ہی امریکہ اور اس کے ساتھی ممالک کو خبردار کیا جاچکا ہے کہ بحیرہ جنوبی چین کے سمندر میں اشتعال انگیز کارروائیوں سے باز رہا جائے۔ دفاعی ماہرین کا کہنا ہے کہ فلپائن کی جانب سے بحیرہ جنوبی چین کی نگرانی کے لئے بحری اور ہوائی جہازوں کا حصول صورتحال کو مزید سنگین بنادے گا، جس کا نتیجہ خطے میں تصادم کی صورت میں بھی سامنے آسکتا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -