خادم اعلی دیہی روڈز پروگرام فیز 1تا 4، قومی خزانہ سے کروڑوں روپے خوردبرد کر لئے گئے

خادم اعلی دیہی روڈز پروگرام فیز 1تا 4، قومی خزانہ سے کروڑوں روپے خوردبرد کر ...

لاہور ( ارشد محمود گھمن/سپیشل رپورٹر) خادم اعلی دیہی روڈز پروگرام فیز 1 تا 4 میں کروڑوں روپے کی بے ضابطگیوں کا انکشاف ہوا ہے، حکومت پنجاب کے ترقیاتی کاموں کے لئے جاری منصوبوں کو سی اینڈ ڈبلیو پنجاب کے اعلیٰ افسروں سابق چیف انجینئرساؤتھ فرحت منیر اور چیف انجینئر نارتھ کے ایکسین،ایس ڈی او،اور سب انجینئرسمیت فرمز مالکان نے ناقص مٹیریل اورفرضی ووچر ڈال کر کروڑوں روپے مبینہ طو ر پر قومی خزانہ سے خوردبرد کر لئے ہیں، ذرائع کے مطابق مذکو رہ محکمہ میں کرپٹ افسروں کے خلاف چلنے والی میگا سکینڈل کی محکمانہ انکوائریوں کو مبینہ طور پر مک مکا کر کے داخل دفتر کر دیا گیا ہے۔ وزیر اعلی پنجاب میاں شہباز شریف نے ڈی جی اینٹی کرپشن کوتحقیقات کا دائرہ وسیع کر کے لوٹی گئی رقوم کی واپسی او ر اس میں ملوث ذمہ دارافسروں کو کیفر کردار تک پہنچا کر محکمہ میں مو جو د کالی بھیڑوں کو منظر عام پر لانے کا ٹارگٹ دیا ہے ، بریگیڈیر (ر) مظفر حسین رانجھا ڈی جی اینٹی کرپشن کا کہنا ہے کے وزیر اعلیٰ کے اعتماد کو کبھی ٹھیس نہیں پہنچاؤں گا، کرپشن کا خاتمہ ہی میری اولین ترجیح ہو گی۔ ذرائع کے مطابق حکومت پنجاب نے گزشتہ4سال کے دوران محکمہ سی اینڈ ڈبلیو پنجاب کو صوبائی دارالحکومت سمیت پنجاب بھر کے اضلاع گوجرانوالہ،گجرات،منڈی بہا ء الدین، جہلم، سیالکوٹ، نارووال، فیصل آباد، شیخوپورہ،قصوراور چیف انجینئرساؤتھ کے اضلاع جن میں ڈیرہ غازی خان ،بہاولپور، ملتان وغیرہ کے ارکان اسمبلی ، وزراء کو مقامی حلقوں میں بہترین کارکردگی کے پیش نظر اربوں روپے کے ترقیاتی فنڈز،فیز ون تا فیز 4خادم اعلی دیہی روڈز پروگرام،اور دیگر سڑکوں کے لئے جاری کئے جس کا بھانڈہ ہونے والی بارشوں نے پھوڑ دیا،سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں۔ان میں بڑے بڑے شگاف پڑ چکے ہیں بعض ارکان اسمبلی کی شکایات پر ان شہروں کے ایس ای، ایکسین،ایس ڈی او ز،سب انجینئرز سمیت ٹھیکیداروں فر مز مالکان کے خلاف محکمانہ کاروائیوں کا آغاز کر کے ٹیکنیکل عملہ کے ذریعے رپورٹس حاصل کر کے متعلقہ چیف انجینئرزاور سیکرٹری مواصلات پنجاب میاں مشتاق کو بھیجی گئیں۔ ذرائع نے بتایا کے سابق چیف انجینئر زفرحت منیر اورسرفراز بٹ نے مبینہ طور پر ایسے کرپٹ افسروں سے مک مکا کر کے چلنے والی انکوائریوں کو داخل دفتر اورردی کی ٹوکری کی نذر کر رکھا ہے۔اس با رے میں مذکورہ افسروں کاکہنا تھاکہ محکمانہ انکوائریاں معمول کے مطابق ہوتی رہتی ہیں اِ ذمہ دار افسروں کے خلاف کرپشن ثابت ہونے پر کارروائی بھی کی جاتی ہے اور بے گناہ ہونے پر داخل دفتر کر دی جاتی ہیں تاہم موجودہ چیف انجینئر ز نارتھ شفقت بٹر اورچیف انجینئر سینٹرل زون خالد جاوید ،چیف انجینء ساؤتھ نیئر سعید کا کہنا ہے کہ ابھی چارج لئے چند ماہ ہوئے ہیں ،تحقیقات جاری ہے ،ذمہ دارافسروں کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے گا ، اب خادم اعلیٰ دیہی روڈ فیز 5پرکام جاری ہے جس کی وہ خود نگرانی کررہے ہیں ۔

مزید : صفحہ آخر