شانگلہ میں غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ اور کم وولٹیج کے خلاف عوام سراپا احتجاج

شانگلہ میں غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ اور کم وولٹیج کے خلاف عوام سراپا احتجاج

الپوری(ڈسٹرکٹ رپورٹر)شانگلہ میں غیر اعلانیہ لوڈ شیڈنگ اور کم وولٹیج کے خلاف عوام سراپا احتجاج بن گئے۔ ضلع بھر میں ہر ایک گھنٹہ بعد بجلی چلی جاتی ہے۔شانگلہ گریڈ سٹیشن اوور لوڈ ہے۔سسٹم ٹریپ ہوجاتا ہے۔مالم جابہ کو بجلی دینے کے بعد بجلی کی آنکھ مچھولی کا سلسلہ شروع ہوا ہے۔چکیسر اور بشام کے علاقوں میں بجلی لوڈشیڈنگ 16گھنٹوں سے تجاوز کر گیا۔ انجینئرامیرمقام نے ضلع شانگلہ کے گریڈ سٹیشن سے مالم جبہ کے علاقوں کو بجلی فراہم کرکے شانگلہ کے عوام کے ساتھ ظلم کیا ہے،ایسے فیصلوں سے واضح ہوتا ہے کہ انجینئر امیرمقام اپنے آبائی انتخابی حلقے کو نظر انداز کررہے ہیں ۔سروے رپورٹ میں مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے افراد کا اظہار خیال۔ان لوگوں کا کہنا تھا کہ شا نگلہ گریڈ سٹیشن پر پورا ضلع کا بوجھ تھا جبکہ امیرمقام نے مالم جبہ کے علاقوں کو بجلی دے کریہاں پر بجلی کا بحران پیداکردیا۔مالم جبہ کو بجلی دینے کی وجہ سے اندرونی شانگلہ ایک طرف وولٹیج مسلسل کم ہوتا جارہا ہے تو دوسری طرف لوڈشیڈنگ میں بھی مسلسل اضافہ کیا جارہا ہے۔وولٹیج کی کمی سے واپڈا بجلی موجودہ حالات میں فریج اور الیکٹرانک مشینری کو نہیں چلاسکتی۔ شانگلہ کوٹکے گریڈ سٹیشن پر لوڈبڑھ گیا ۔بار بار ٹریپنگ۔ہر ایک گھنٹہ بعد بجلی سپلائی بند۔تحصیل بشام اور چکیسرمیں لوڈشیڈنگ 16گھنٹوں سے تجاوز کر گیا۔ شانگلہ کے عوام نے ہر الیکشن میں امیرمقام کا ساتھ دیا ہے اور ان کو مکمل سپورٹ کیا جس کا سلہ آج ان لوگوں کو یہ مل رہا ہے کہ امیرمقام اب شانگلہ کے عوام کے بجائے دیگر اضلاع کے عوام کو ترجیح دے رہا ہے جو یہاں کے عوام کی مینڈیٹ کے ساتھ غداری ہے۔ سروے رپورٹ میں عوامی حلقوں نے کہا ہے کہ شانگلہ گریڈ سٹیشن سے مالم جبہ بجلی ٹرسمیشن لائن کو فلفورنہ ہٹایا گیا تو ضلع بھر کے عوام اپنی سیاسی وابستگی کو شانگلہ کے مفادات کے خاطرقربان کرکے احتجاجی تحریک کا باقاعدہ طور پر اعلان کریں گے۔۔

مزید : پشاورصفحہ آخر