قیام پاکستان میں اقلیتی برادری نے بھرپور کردار ادا کیا، شفقت حیات

قیام پاکستان میں اقلیتی برادری نے بھرپور کردار ادا کیا، شفقت حیات

واہ کینٹ (نمائندہ پاکستان) واہ چھاؤ نی کے تعلیمی اداروں میں ایک باوقار نام سینٹ پال ہائی سکول واہ ماڈل ٹاون واہ کینٹ کا بھی ہے ۔ ادارہ کے سربراہ شفقت حیات اور ان کی مسز کنول حیات گزشتہ چار دہائیوں سے واہ چھاؤنی کے طلباء کو معیاری تعلیم سے روشناس کرانے کے ساتھ ساتھ طلباء کی تربیت بھی ایسے خطوط پے کر رہے ہیں کہ وہ مستقبل قریب میں وطن عزیز کی حقیقی معنوں میں تقدیر سنوارنے میں اپنا مثبت کردار ادا کر سکیں اس وقت بھی ان کے سکول کے فارغ التحصیل طلباء و طالبات با لخصوص شعبہ طب ، تدریس ، دفاع ، سیاست و تجارت اور زندگی کے مختلف شعبو ں میں نمایاں خدمات سر انجام دے کر اپنے مادر علمی کی احسن طریق سے نمائندگی کر رہے ہیں ۔یوم آزادی پاکستان کے سلسلہ میں ایک باوقار تقریب کا اہتمام کیا گیا تقریب کی صدارت ممتاز ماہر تعلیم و کالم نگار عطاء الرحمان چودھری نے کی جبکہ چوہدری شیر افضل ڈپٹی ڈسٹرکٹ ایجو کیشن آفیسر ٹیکسلامہمان خصوصی تھے ۔ دیگر مہمانو ں میں جرمنی سے آئی ہوئی ممتاز ادیبہ ثناء احمد ، مشتاق خان ، علام الدین ، عابد حسین ، زاہد رفیق، حافظ محمد رمضان اور محمد عثمان یونس اے ۔ ای ۔ او ٹیکسلا تھے۔مہمانان گرامی کی آمد پر سکو ل کے معصوم طلباء گل پاشی اور گلدستے پیش کر کے خو ش آمدید کہا ۔ تقریب کا آغاز تلاو ونعت رسول مقبولﷺ سے ہوا۔ہونہار مقررہ علینہ بتول جماعت نہم ، کشف الایمان درجہ نہم اور مریم ریاض طالبہ درجہ دہم نے نہایت ہی خوبصورت پیرائے میں اپنی تقاریر کے ذریعے قیام پاکستان کے پس منظر سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ یہ وطن بڑی قربانیوں کے بعد ہمارے بزرگوں نے حضرت قائد اعظم محمد علی جناح ؒ کی ولولہ انگیز قیادت میں آزاد کرا کے ہمیں دیا تا کہ ہم ایک خوشحال اسلامی جمہوری مملکت میں عدل و انصاف اور امن و سکون کے ساتھ اپنی زندگیوں کو بسر کر سکیں لیکن بد قسمتی سے ہم ابھی تک اپنے پیارے وطن کو سنوارنے میں ناکام ہیں اس کا ذمہ دار کون ہے ؟ ملی نغمے پیش کئے اور حاضرین سے خوب داد سمیٹی، ۔ واہ چھاؤنی کے ممتاز مسیح سکالر و پاسٹر و ماہر تعلیم ڈاکٹر شوکت حیات نے جذباتی انداز میں قیام پاکستان میں اقلیتی برادری با لخصوص کرسچئن کمیونٹی کے کردار اور اپنے بزرگوں اور خاندان کی خدمات پر تفصیلی روشنی ڈالی درسگاہ کے پرنسپل شفقت حیات نے حاضرین کو بتایا کہ اس سال امتحان میٹرک فیڈرل بورڈ اسلام آباد کے زیر اہتمام ان کے اداروں کا نتیجہ نہ صرف 100سو فیصد رہابلکہ محمدآصف1017،عاشر اقبال1012، عبد المعید1012 ، وہاج احمد 1009ماہ نور شاکر 1001، نشرہ عرفان 989نمبرات حاصل کر کے درسگاہ کی نیک نامی میں اضافہ کا باعث بنے مہمان خصوصی چوہدری شیر افضل نے خوبصورت تقریب کے انعقاد پر شفقت حیات اور ان کے جملہ سٹاف کو مبار کباد دیتے ہوئے کہا کہ آپ لوگ جس جذبہ حب الوطنی سے سر شار ہو کرنئی نسل کی تربیت کر رہے ہیں اس پہ مبار ک باد کے مستحق ہیں صدرتقریب عطاء الرحمان چوہدری نے اپنے خطاب میں کہا کہ یہ وطن کسی نے بھی طشتری میں رکھ کر ہمیں پیش نہیں کیا بلکہ کم و بیش تیس لاکھ لوگوں کی جانی و مالی قربانیوں کا یہ پاکستان ثمر ہے اس کی بنیادو ں میں ہمارے بزرگوں نے اینٹوں کی جگہ اپنی ہڈیاں اور پانی کی جگہ اپنے خون کی ندیاں بہا کر اس پاکستان کے لیے اپنا تن من دھن ، بیوی بچے ، بہن بھائی ، عزیز و اقارب قربان کیے انہوں نے کہا کہ اس ملک نے انشاء اللہ تا قیامت قائم رہنا ہے کیونکہ اس کی بنیادوں میں ٹیپو سلطان شہید کا خون ، سر سید احمد خان کی نگاہ دور بین، اقبال ؒ کے افکاراور قائد اعظم ؒ کی جہد مسلسل دوسرے مسلمان اکابرین اور اقلیتوں کا ایثار بھی شامل ہے ۔ انہوں نے اساتذہ کرام پہ زور دیا کہ وہ نئی نسل کی ایسے انداز میں تربیت کریں کہ آنے والے وقت میں یہ طلباء اس ملک کی جغرافیائی و نظریاتی سرحدو ں کے تحفظ کے لیے اپنے آپ کو عملی طور پر پیش کرسکیں ۔ اختتام تقریب میٹرک امتحان میں نمایاں پوزیشن ہو لڈرزمیں اسناد تقسیم کئی گئیںیوم آزادی پاکستان کے حوالہ سے تیار کردہ کیک کاٹا گیا ،قوم ترانے اور ملک و ملت کی سلامتی کے لیے خصوصی دعا کی گئی اور یوں یہ ملی تقریب انمنٹ نقوش چھوڑے اختتام پذیر ہوئی ۔تقریب کی نظامت کے فرائض مس عقیلہ نے سر انجام دیے

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر