میڈیا کے بارے میں کوئی بھی قانون سازی صحافیوں کی مشاورت سے ہوگی،فواد چودھری

میڈیا کے بارے میں کوئی بھی قانون سازی صحافیوں کی مشاورت سے ہوگی،فواد چودھری

اسلام آباد (آئی این پی) وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا ہم نے سرکاری ٹی وی سے سینسر شپ ختم کی ہے‘ میڈیا کے حوالے سے کوئی بھی قانون سازی صحافتی تنظیموں کی مشاورت سے ہوگی ،سرکاری اشتہارات کے لئے کوئی فارمولا وضع کیا جائے، ماضی میں زیادہ اشتہارات دیئے گئے اب درمیانی راستہ نکالا جائے گا ،الیکٹرانک‘ پرنٹ اور سوشل میڈیا کا ایک دوسرے پر انحصار ہے‘ مستقبل میں سینسر شپ حکومت کے ہاتھ میں نہیں رہے گی‘ ٹیکنالوجی میں ترقی کی وجہ سے میڈیا میں بھی تیزی سے تبدیلیاں رونما ہوں گی۔ جمعرات کو وزیر اطلاعات نے سی پی این ای کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا ملک اوپر جائے گا تو ہم سب اوپر جائیں گے ہمیں 28ہزار کروڑ کے قرضے ورثے میں ملے، ملک امیر ہوگا تو میڈیا کو بھی فنڈز دیئے جاسکیں گے، ٹیکنالوجی میں ترقی کی وجہ سے میڈیا میں بھی تیزی سے تبدیلیاں رونما ہوں گی، مستقبل میں آپ کو جدت کی طرف جانا پڑے گا، چھ ستمبر کے دن ہم اپنے شہیدوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ تحریک انصاف ایک اکثریت پارٹی ہے ہم نے آتے ہی اپنے منشور پر کام شروع کردیا ہم نے سرکاری ٹی وی سے سینسر شپ ختم کی ہے آتے ہی پورے ملک میں پانچ لاکھ درخت لگائے نئے سیٹلائٹ نظام سے میڈیا میں انقلاب آرہا ہے۔ میڈیا کے حوالے سے کوئی بھی قانون سازی صحافتی تنظیموں کی مشاورت سے ہوگی۔ میڈیا اور اپوزیشن کے بغیر آگے بڑھنا ممکن نہیں۔ پرائم منسٹر کا مقصد ہے کہ ہم تمام معاملات کو آسان بنائیں میڈیا کی آزادی کی حفاظت کرنا بھی ضروری ہے۔ ریگولیٹری ادارے بنانے کا مقصد سینسر شپ ہرگز نہیں میڈیا کی آزادی ریاست کے لئے انتہائی اہم ہے۔پاکستان کو ترقی کی راہ پر ڈالنا ہمارا منشور ہے اس پر عمل کریں گے۔ میڈیا کو اس حوالے سے حکومت کا ساتھ دینا ہے۔ ہمیں ایک شفافیت فارمولے پر عمل کرنا ہوگا ہمیں پی آئی ڈی کو ایک خودمختار ادارہ بنانا ہے ماضی میں زیادہ اشتہارات دیئے گئے اب درمیانی راستہ نکالا جائے گا۔ میں نے ایک آزاد بورڈ بنانے کا فیصلہ کیا تھا میڈیا کوریج‘ مانیٹرنگ اور رپورٹنگ کرنے والے صحافیوں کے معاملے پر ہم نے آر ٹی آئی جاری کردیا ہے حکومت کو اوپن ہونا چاہئے۔

فواد چودھری

مزید : کراچی صفحہ اول