ہائبر ڈوار خطرے سے بخوبی آگاہ، اینٹ کا جواب پتھر سے دینگے: جنرل باجوہ، اپنے نصب العین پر متحد قوم کو کوئی شکست نہیں دے سکتا: عمران خان 

    ہائبر ڈوار خطرے سے بخوبی آگاہ، اینٹ کا جواب پتھر سے دینگے: جنرل باجوہ، ...

  

 راولپنڈی (سٹاف رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں)پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے ایک بار پھر واضح کیا ہے کہ پاکستان ایک امن پسند ملک ہے،اگر ہم پر جنگ تھوپی گئی تو ہم اینٹ کا جواب پتھر سے دینگے،جس کا مظاہرہ ہم نے بالاکوٹ کے ناکام حملے کے جواب میں دیا،اس لیے دْشمن کو کوئی شک نہ ہو،بے شمار قربانیوں کی بدولت، الحمدواللہ آج کا پاکستان ایک پرامن پاکستان ہے، اب ہم نے امن کو خوشحالی اور ترقی میں تبدیل کرنا ہے،بحیثیت قوم ہمیں اس کے لئے جدوجہد کرنا ہوگی، اتحاد، ایمان اور تنظیم کے اصولوں کو اپنانا ہوگا اور اپنے قائد کے فرمان  کام، کام اور بس کام کو اپنانا ہوگا، افواج ِپاکستان نے اقوامِ متحدہ کی امن فوج کا حصہ بن کردنیا کے مختلف علاقوں میں قیام ِامن کیلئے بہت سی قربانیاں دی ہیں جس کی دنیا معترف ہے،افغانستان میں قیام امن کی کوششوں میں پاکستان کا کلیدی کردار اس کا منہ بولتا ثبوت ہے، ہمارے ہمسایہ ملک ہندوستان نے ہمیشہ کی طرح ایک غیرذمہ دارانہ رویہ اختیار کر رکھا ہے، خاص طور پر مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کرنے کے غیرقانونی اقدام کے بعد خطے کے امن کو ایک مرتبہ پھر شدید خطرات سے دوچار کردیا ہے، کوئی شک نہیں کہ جموں و کشمیر بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ  متنازعہ مسئلہ ہے، ہم کسی بھی یکطرفہ فیصلے کوتسلیم نہیں کرتے،ہمیں نہ تو نئے حاصل شدہ اسلحے کے انبار سے مرعوب کیا جا سکتا ہے اور نہ ہی ہم پے کوئی دھمکی اثرانداز ہوسکتی ہے،فواج پاکستان پوری قوت سے لیس، چوکنا اور باخبر ہیں، اور انشاء اللہ،دشمن کی کسی بھی حرکت کا فوری اور پوری قوت سے جواب  دینے کے لیے تیار ہیں۔اتوار کو یوم دفاع کے موقع پر جی ایچ کیو میں مرکزی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پاک فوج کے سربراہ نے کہاکہ گزشتہ بیس سالوں میں ہم بڑی آزمائش سے گزرے ہیں،مشرقی و مغربی سرحدوں پر حالتِ جنگ کا سامنا رہا، زلزلے اور سیلاب جیسی آزمائشیں بھی درپیش رہیں، دہشت گردی اور شدت  پسندی کے خلاف ہم نے اعصاب شکن جنگ لڑی، ہزاروں افراد کی قربانی دی اور لاکھوں دربدر ہوئے۔انہوں نے کہاکہ حال ہی میں کرونا جیسی وبا اور ٹڈی دل جیسی آفت کا بھی سامنا رہاجس کا ہم نے کامیابی سے مقابلہ کیا۔ آرمی چیف نے کہاکہ آزمائش کی ان تمام گھڑیوں میں ہم حوصلہ نہیں ہارے بلکہ سینہ تان کر ڈٹ گئے جس کی بدولت اللہ نے ہمیں فتح دی۔ انہوں نے کہاکہ بے شک اس محنت اور بے شمار قربانیوں کی بدولت، الحمدواللہ آج کا پاکستان ایک پرامن پاکستان ہے اور اب ہم نے اس امن کو خوشحالی اور ترقی میں تبدیل کرنا ہے۔ انہوں نے کہاکہ بحیثیت قوم ہمیں اس کے لئے جدوجہد کرنا ہوگی۔ انہوں نے کہاکہ اتحاد، ایمان اور تنظیم کے اصولوں کو اپنانا ہوگا اور اپنے قائد کے فرمان  کام، کام اور بس کام کو اپنانا ہوگا۔آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ افواج ِپاکستان نے اقوامِ متحدہ کی امن فوج کا حصہ بن کردنیا کے مختلف علاقوں میں قیام ِامن کیلئے بہت سی قربانیاں دی ہیں جس کی دنیا معترف ہے،ہم پوری دنیا  اوربالخصوص اپنے خطے میں امن کے خواہاں ہیں،افغانستان میں قیام امن کی کوششوں میں پاکستان کا کلیدی کردار اس کا منہ بولتا ثبوت ہے، تاہم ہمارے ہمسایہ ملک ہندوستان نے ہمیشہ کی طرح ایک غیرذمہ دارانہ رویہ اختیار کر رکھا ہے، خاص طور پر مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کرنے کے غیرقانونی اقدام کے بعد خطے کے امن کو ایک مرتبہ پھر شدید خطرات  سے دوچار کردیا ہے،اس میں کوئی شک نہیں کہ جموں و کشمیر بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ مسئلہ ہے، اس حوالے سے ہم کسی بھی یکطرفہ فیصلے کوتسلیم نہیں کرتے۔ انہوں نے کہاکہ بانی ِ پاکستان قائداعظم محمد علی جناح نے کشمیر کو پاکستان کی شہ رگ قراردیا تھا،میں واضح کردینا چاہتا ہوں کہ ان کے اس قول کا ہر لفظ ہمارے  لئے اہم اور ایمان کا حصہ ہے اس حوالے سے ہم کسی لچک کا مظاہرہ نہیں کریں گے، ہمیں نہ تو نئے حاصل شدہ اسلحے کے انبار سے مرعوب کیا جا سکتا ہے اور نہ ہی ہم پے کوئی دھمکی اثرانداز ہوسکتی ہے۔انہوں نے کہاکہ افواج پاکستان پوری قوت سے لیس، چوکنا اور باخبر ہیں، اور انشاء اللہ،دشمن کی کسی بھی حرکت کا فوری اور پوری قوت سے جواب  دینے کے لیے تیار ہیں۔انہوں نے کہاکہ وقت ہمیں کئی بار آزما چکا،ہم ہر بار سرخرو ہوئے ہیں،پاکستان ایک زندہ حقیقت ہے۔ ہمارا خون، ہمارا جذبہ، ہمارا عمل ہر محاذ پر اس کی گواہی دے گا۔ انہوں نے کہاکہ میں آج کے دن کی مناسبت سے اپنی قوم اور دنیا کو یہ پیغام دینا چاہتا ہوں کہ پاکستان ایک امن پسند ملک ہے لیکن اگر ہم پر جنگ تھوپی گئی تو ہم اینٹ کا جواب پتھر سے دینگے  جس کا مظاہرہ ہم نے بالاکوٹ کے ناکام حملے کے جواب میں دیا۔ اس لیے دْشمن کو کوئی شک نہ ہو۔ اللہ تعالی ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔ آمین۔آخری میں آرم چیف نے پاک فوج زندہ باد،پاکستان پائندہ باد کانعرہ لگایا۔دریں اثناآرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ  نے کہا کہ  ففتھ جنریشن یا ہائبرڈ وار کے خطرے سے بخوبی آگاہ ہیں، افواج پاکستان پوری قوت سے لیس،چوکنا اور باخبر ہیں۔انٹرسروسز پبلک ریلیشنز کے مطابق یوم دفاع کے موقع پر جنرل ہیڈ کوارٹرز (جی ایچ کیو) میں فوجی اعزازات دینے کی تقریب ہوئی جس کیمہمان خصوصی آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ تھے۔ آئی ایس پی آر کے مطابق تقریب میں شہداکے اہل خانہ، غازیوں اور حاضر سروس افسران  نے شرکت کی۔تقریب میں آرمی چیف نے جرات کامظاہرہ کرنے والے جوانوں کو اعزازات سے نوازا، 40 افسروں کو ستارہ امتیاز ملٹری اور 24 افسروں اور جوانوں کو تمغہ بسالت سے نوازاگیاجب کہ ایک جوان کو یونائیٹڈ نیشن میڈل سے نوازا گیا،شہدا کے اعزازات ان کے اہل خانہ نے وصول کیے۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے آرمی چیف کاکہنا تھا کہ 6 ستمبر1965کا دن ہماری تاریخ کا ایک لازوال باب ہے یہ دن ہمیں یاد دلاتا ہے کہ ہم نے اپنے سے کئی گنا بڑے دْشمن کو شکست دی تھی۔ان کا کہنا تھا کہ ہم آج بھی دْشمن کے ناپاک عزائم کو شکست دینے کے لیے ہمہ وقت تیار ہیں اور آج بھی ہم اپنی آزادی کی حفاظت اپنے خون سے کر رہے ہیں، 

آرمی چیف

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ جو قوم کسی نصب العین پر متحد ہو اسے کوئی دشمن شکست نہیں دے سکتا۔انہوں نے یوم دفاع کے موقع پر ایک ٹویٹر پیغام میں کہا کہ ہم اپنے جنگی مشاہیر کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ انہیں 1965ئکی جنگ اب بھی یاد ہے جب ان کی عمر 13 سال تھی۔وزیراعظم نے کہا کہ وہ اتحاد کی اس مثال کو کبھی بھی نہیں بھول سکتے جب پوری قوم عزم واستقلال کے ساتھ دشمن کے سامنے سینہ سپر ہو گئی تھی۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ جناح کا پاکستان بنانے کیلئے ہمیں آج بھی اسی جذبے کی ضرورت ہے۔

عمران خان

مزید :

صفحہ اول -