جھوک اترا میں نوجوان قتل‘ پولیس کی نااہلی بے نقاب‘ ایس ایچ او تبدیل 

  جھوک اترا میں نوجوان قتل‘ پولیس کی نااہلی بے نقاب‘ ایس ایچ او تبدیل 

  

جھوک اترا (نمائندہ پاکستان)جھوک اترا پولیس کی روایتی بے حسی نے جوان کی جان اور پانچ جوانوں کو شدید زخمی کردیا‘ تفصیلات کے مطابق تھانہ جھوک اترا میں رانا برادری کے تنازع رشتہ پر ایک مرتبہ رانا اللہ وسایا اور رانا عبداللہ گروپ میں لڑائی ھو چکی ہے جبکہ گزشتہ سے پیوستہ روز عدالت میں دونوں فریقین میں توں تکرار ھوئی اور رانا اللہ وسایا گروپ کے نوجوانوں نے رانا عبداللہ گروپ کو دھمکی آمیز پیغام میں کہا کہ گزشتہ روز شام پانچ بجے ہمارا انتظار کرنا اور فیصلہ (بقیہ نمبر47صفحہ 7پر)

کن جھگڑا ھو گا جس کے نتیجہ میں رانا ظفر عبداللہ نے اس بارے جھوک اترا پولیس کو آگاہ کیا لیکن جھوک موڑ جہاں جھگڑا ھوا پولیس اسٹیشن سے آدھا کلو میٹر سے کم فاصلے پر جھوک اترا پولیس جب پہنچی تو فائرنگ سے ایک جوان ناصر عبداللہ کو موت کے گھاٹ اتار کر باقی ساجد عبداللہ عامر عبداللہ ماجد عبداللہ رانا سلطان رانا ارسلان کو گولیوں سے چھلنی اور خرم اقبال سمیت ان کو شدید زخمی کر دیا جب جھوک اترا پولیس پہنچی تو رانا عبداللہ گروپ کے افراد نے کہا کہ اب آپ کیا کرنے آے ہیں جبکہ ہم کوچالیس منٹ تک تشدد اور گولیوں سے چھلنی کرتے رھے جسکی تھڑاہٹ سے علاقہ گونج اٹھا لیکن جھوک اترا پولیس صرف لاشیں گرنے کا انتظار کرتے رہے اسکی اطلاع ڈی پی او ڈیرہ غازی خان کو دی جنہوں نے موقع پر پہنچ کر تفصیلات جانی اور علاقہ کے درجنوں افراد نے ڈی پی او کو کہا کہ اگر پولیس بروقت پہنچ جاتی تو نقصان نہ ھوتا اس پر ڈی پی او ڈیرہ غازی خان نے رانا شبیر ایس ایچ او جھوک اترا کو تبدیل کرکے انکی جگہ کرم الہی کو تعینات کر دیا جنہوں نے چارج سنبھال کر کام شروع کر دیا۔

تبدیل

مزید :

ملتان صفحہ آخر -