6، 7ستمبر جغرافیائی‘نظریاتی دفاع کے حوالے سے یادگار دن، حافظ حسین 

  6، 7ستمبر جغرافیائی‘نظریاتی دفاع کے حوالے سے یادگار دن، حافظ حسین 

  

کوئٹہ(این این آئی) جمعیت علماء اسلام کے مرکزی ترجمان اور سابق سینیٹر حافظ حسین احمد نے کہا ہے کہ 6 ستمبر وطن عزیز کے جغرافیائی دفاع و استحکام اور 7ستمبر نظریاتی دفاع اور استحکام کا دن ہے یہ دونوں دن ہمارے لیے یوم الفتح ہیں  پارلیمنٹ کے اندر مولانا مفتی محمود اور دیگر مذہبی جماعتوں کے قائدین نے ختم نبوت ؐ کے حوالے سے جو آئینی جنگ لڑی اور اس میں کامیابی حاصل ہوئی اس میں یقینا اس وقت کے وزیر اعظم ذوالفقار علی بھٹو مرحوم کا بھی بھرپور حصہ اور تعاون تھا اپنی رہائشگاہ جامعہ مطلع العلوم میں مختلف وفود سے گفتگو کررہے تھے انہوں نے کہا کہ 7 ستمبر 1974ء کا دن ہماری قومی اور ملی تاریخ میں خاص اہمیت کا حامل ہے اس دن مسلمانوں کے دیرینہ مطالبے پر اس وقت کی قومی اسمبلی نے قادیانیوں کو جمہوری اور پارلیمانی بنیاد پر غیر مسلم اقلیت قرار دینے کا تاریخ ساز فیصلہ کیا یہ یادگار فیصلہ مسلمانوں کی طویل جدوجہد کا نتیجہ تھا، انہوں نے کہا کہ ختم نبوت کے حوالے سے پاکستان کے آئین میں ترمیم کے بعد سے آج تک مرزا قادیانی کے ماننے والوں نے نہ صرف یہ کہ آئین پاکستان کو ماننے سے انکار کیا بلکہ مرزا قادیانی کو نہ ماننے والے تمام مسلمانوں کو ہی دائرہ اسلام سے خارج قرار دیا اور وہ آج تک اسی پر کاربند ہیں جے یو آئی ترجمان نے کہا کہ برطانیہ کا یہ خود ساختہ پودا ”پہنچی وہیں پہ خاک جہاں کا خمیر تھا“کہ مصداق آج بھی وہیں پناہ گزین ہیں اس طرح صحابہ کرام خلفاء راشدین اور خصوصاً ابوبکر صدیق رضوان اللہ علیھم اجمعین کے خلاف ہزرہ سرائی کرنے والے بھی وہیں جاکر پناہ لے چکے ہیں، آسیہ ملعونہ، سلمان رشدی، الطاف ہو یا کوئی اور سیاستدان ان سب کی پناہ گاہ برطانیہ ہی ہے، حافظ حسین احمد نے کہا کہ 6اور 7ستمبر ملک کے جغرافیائی اور نظریاتی دفاع کے حوالے سے دو اہم اوریادگار دن ہیں آج ہم عہد کرتے ہیں کہ ختم نبوت کے نظریاتی اساس ملک کے جغرافیائی سالمیت کے حوالے سے جمعیت علماء اسلام اپنا بھرپور رول ادا کرتی رہے گی۔

حافظ حسین احمد 

مزید :

صفحہ آخر -