دیوانگی سے دوش پہ زُنار بھی نہیں

دیوانگی سے دوش پہ زُنار بھی نہیں
دیوانگی سے دوش پہ زُنار بھی نہیں

  

دیوانگی سے دوش پہ زُنار بھی نہیں

یعنی ہمارے جیب میں اک تار بھی نہیں

دل کو نیازِ حسرتِ دیدار کر چکے

دیکھا تو ہم میں طاقتِ دیدار بھی نہیں

ملنا ترا اگر نہیں آساں تو سہل ہے

دشوار تو یہی ہے کہ دشوار بھی نہیں

بے عشق عمر کٹ نہیں سکتی ہے اور یاں

طاقت بہ قدرِ لذّتِ آزار بھی نہیں

شوریدگی کے ہاتھ سے سر ہے وبالِ دوش

صحرا میں اے خدا کوئی دیوار بھی نہیں

گنجائشِ عداوتِ اغیار اک طرف

یاں دل میں ضعف سے ہوسِ یار بھی نہیں

ڈر نالہ ہائے زار سے میرے، خُدا کو مان

آخر نوائے مرغِ گرفتار بھی نہیں

دل میں ہے یار کی صفِ مژگاں سے روکشی

حالانکہ طاقتِ خلشِ خار بھی نہیں

اس سادگی پہ کون نہ مر جائے اے خُدا!

لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں

دیکھا اسدؔ کو خلوت و جلوت میں بارہا

دیوانہ گر نہیں ہے تو ہشیار بھی نہیں

شاعر: مرزا غالب

Dewaangi Say, Dosh Pe Zunnaar Bhi  Nahen

Yaani Hammri Jaib Men Ik Taar Bhi  Nahen

Dil Ko Nayaaz e Hasrat e Dedaar Kar Chukay

Dekha To Ham Men Taaqat e Dedaar Bhi  Nahen

Milna Tira Agar Nahen Aasaan To Sahall Hay

Dushwaar To Yahi Hay Keh Dushwaar Bhi  Nahen

Be Eshq Umr Katt Nahen Sakti Hay Aor Yaan

Taaqat Ba Qadr e Lazzat e Azaar Bhi  Nahen

Shoreedagi K Haath Say Hay Sar o Baal e Dosh

Sehra Men Ay Khuda Koi Dewaar Bhi  Nahen

Gunjaaesh e Adaawat e Aghyaar Ik Taraf 

Yaan, Dil Men Zoaf Say Hawas e Yaar Bhi  Nahen

Dar Naala Haa e Zaar Say Meray Khuda Ko Maan

Aakhir Nawaa e Murgh e Gariftaar Bhi  Nahen

Dil Men Hay Yaar Ki Saf ne Mizzgaan Say Rukashi

Haalaan KEh Taaqat e Khalish e Khaa rBhi  Nahen

Iss Saadgi Pe Kon Na Mar Jaaey , Ay KHUDA

Larrtay Hen Aor Haath Men Talwaar Bhi  Nahen

Dekha ASAD Ko Khalwat o Jalwat Men Baarha

Dewaana Gar Nahen Hay To Hushyaar Bhi  Nahen

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -