مزے جہان کے اپنی نظر میں خاک نہیں

مزے جہان کے اپنی نظر میں خاک نہیں
مزے جہان کے اپنی نظر میں خاک نہیں

  

مزے جہان کے اپنی نظر میں خاک نہیں

سوائے خونِ جگر، سو جگر میں خاک نہیں

مگر غبار ہوے پر ہوا  اُڑا لے جائے

وگرنہ تاب و تواں بال و پر میں خاک نہیں

یہ کس بہشتِ شمائل کی آمد آمد ہے؟

کہ غیرِ جلوۂ گل رہ گزر میں خاک نہیں

بھلا اُسے نہ سہی، کچھ مجھی کو رحم آتا

اثر مرے نفسِ بے اثر میں خاک نہیں

خیالِ جلوۂ گل سے خراب ہیں میکش

شراب خانے کے دیوار و در میں خاک نہیں

ہُوا ہوں عشق کی غارت گری سے شرمندہ

سوائے حسرتِ تعمیر گھر میں خاک نہیں

ہمارے شعر ہیں اب صرف دل لگی کے اسدؔ

کھلا، کہ فائدہ عرضِ ہُنر میں خاک نہیں

شاعر: مرزا غالب

Mazay Jahaan k Apni Nazar Men Khaak Nahen

So Ay  Khoon e Jigar , So Jigar Men Khaak Nahen

Magar Ghubaar Huay Par Haawaa Urra Lay Jaaey

Wagarna Taab o Tawaan Baal o Par Men Khaak Nahen

Yeh Kiss Bahisht e Shumaail Ki Aamad Aamad Hay

Keh Ghair e Jalwa e Gull Rehguza Men Khaak Nahen

Bhala Usay Na Sahi Kuch Mujhi Ko Rehm Aata

Asar Miray Nafas e Be Asar Men Khaak Nahen

Khayaal e Jalwa e Gull Say Kharaab Hen Mekash

Sharaab Khaanay K Dewaar  Dar Men Khaak Nahen

Hua Hun Eshq Ki Ghaarat Gari Say Sharminda

So Ay Hasrat e Tameer Ghar Men Khaak Nahen

Hamaaray Sher Hen Ab Sirf Dil Lagi K ASAD

Khula Keh Faaida Arz e Hunar Men Khaak Nahen

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -