غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا کہ یوں

غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا کہ یوں
غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا کہ یوں

  

غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا کہ یوں

بوسے کو پوچھتا ہوں میں، منہ سے مجھے بتا کہ یوں

پرسشِ طرزِ دلبری کیجیئے کیا کہ بن کہے

اس کے ہر اک اشارے سے نکلے ہے یہ ادا کہ یوں

رات کے وقت مے پیے، ساتھ رقیب کو لیے

آئے وہ یاں خدا کرے، پر نہ کرے خدا کہ یوں

غیر سے رات کیا بنی یہ جو کہا تو دیکھیے

سامنے آن بیٹھنا اور یہ دیکھنا کہ یوں

بزم ٘یں اُس کے روبرو کیوں نہ خاموش بیٹھیے

اُس کی تو خاموشی میں بھی  ہے یہی مدعا کہ یوں

میں نے کہا کہ "بزم ناز چاہیے غیر سے تہی"

سن کے ستم ظریف نے مجھ کو اٹھا دیا کہ "یوں"؟

مجھ سے کہا جو یار نے "جاتے ہیں ہوش کس طرح"؟

دیکھ کے میری بیخودی، چلنے لگی ہوا کہ "یوں"

کب مجھ کو کوءے یار میں رہنے کی وضع یاد تھی

آئینہ دار بن گئی حیرت ِ نقشِ پا کہ یوں

غر ترے دلمیں ہو خیال وصل میں شوق کا زوال

موج، ٘محیط عام میں مارے ہے دست و پا کہ یوں

جو یہ کہے کہ ریختہ کیوں کہ ہو رشکِ فارسی

گفتۂ غالب ایک بار پڑھ کے اسے سنا کہ یوں

شاعر: مرزا غالب

Ghuncha e Na Shagufta Ko Door Say Mat Dikha Keh Yun

Bosay Ko Poochta Hun Main, Munh Say Mujhay Bataa Keh Yun

Pursidh e Tarz e Dilbari Kijiay Kaya, Keh Bin Kahay

Uss K Har Ik Ishaaray Say Niklay Hay Har Adaa Keh Yun

Raat K Waqt May Piay, Saath Raqeeb Ko Liay

Aaey Wo Yaan Khuda Karay , Par Na Karay Khuda Keh Yun

Ghair Say Raat Kaya Bani , Yeh Jo Kaha To Daikhiay

Saamnay Aan Baithna Aor Yeh Daikna Keh Yun

Bazm Men Uss K Rubaru Kiun Na Khmosh Baithiay

Uss Ki To Khaamshi Men Bhi Hay Yahi Mudaa Keh Yun

Main Nay Kaha Keh Baz e Naaz Chaahiay Ghair Say Tahi

Sun K Sitam Zareef Nay Mujh Ko Utha Dia Keh Yun

Mujh Say Kaha Jo Yaar Nay Jaatay Hen Hosh Kiss Tarah

Dekh K Meri Bekhudi Chalnay Lagi Hawaa Keh Yun

Kab Mujhay Ku e Yaar Men Rehnay Ki Wazaa Yaad Thi

Aaina Daar Ban Gai Hairat e Naqsh e Paa Keh Yun

Gar Tiray Dil Men Ho Khayaal Wasl Men Shoq Ka  Zawaal

Moj  Muheet  Aab Men Maaray Hay Dast e Paa Keh Yun

Jo Yeh Kahay Keh Rekhta Kiun Kar Ho Rashk e Faarsi

Gufta e GHALIB Aik Baar Parrh Kar Usay Suna Keh Yun

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -