وارستہ اس سے ہیں کہ محبت ہی کیوں نہ ہو

وارستہ اس سے ہیں کہ محبت ہی کیوں نہ ہو
وارستہ اس سے ہیں کہ محبت ہی کیوں نہ ہو

  

وارستہ اس سے ہیں کہ محبت ہی کیوں نہ ہو

کیجے ہمارے ساتھ، عداوت ہی کیوں نہ ہو

چھوڑا نہ مجھ میں ضعف نے رنگ اختلاط کا

ہے دل پہ بار، نقشِ محبت ہی کیوں نہ ہو

ہے مجھ کو تجھ سے تذکرۂ غیر کا گلہ

ہر چند بر سبیلِ شکایت ہی کیوں نہ ہو

"پیدا ہوئی ہے " کہتے ہیں" ہر درد کی دوا"

یوں ہو، تو چارۂ غمِ الفت ہی کیوں نہ ہو

ڈالا نہ بیکسی نے کسی سے معاملہ

اپنے سے کھینچتا ہوں، خجالت ہی کیوں نہ ہو

ہے آدمی، بجائے خود اک محشرِ خیال

ہم انجمن سمجھتے ہیں، خلوت ہی کیوں نہ ہو

ہنگامۂ زبونیِ ہمت ہے انفعال

حاصل نہ کیجے دہر سے ، عبرت ہی کیوں نہ ہو

وارستگی بہانۂ بیگانگی نہیں

اپنے سے کر، نہ غیر سے ، وحشت ہی کیوں نہ ہو

مٹتا ہے فوتِ فرصتِ ہستی کا غم کوئی

عمرِ عزیز، صرفِ عبادت ہی کیوں نہ ہو

اُس فتنہ خو کے در سے اب اُٹھتے نہیں اسدؔ

اس میں ہمارے سر پہ قیامت ہی کیوں نہ ہو

شاعر: مرزاغالب

Warsta Uss Say Hen Keh Muhabbat Hi Kiun Na Ho

Kijiay Hamaaray Saath,Adaawat Hi Kun Na Ho

Chorra Na Mujh ko Zoaf Nay Rang Ikhtalaat Ka

Hay Dil Pe Baar Naqsh e Muhaabbat Hi Kiun Na Ho

Hay Mujh Ko Tujh Say Tazkara  e Ghair Ka Gila

Har Chand Bar Sabeel e Shikaayat Hi Kiun Na Ho

Paida Hui Hay Kehtay Hen Har Dard Ki Dawaa

Yun Ho To Chara e Gham e Ulfat Hi Kiun Na Ho

Daal na Bekasi nay Kisi Say Muaamla

Apnay Say Khinchta Hun Khijaalat Hi Kiun Na Ho

Hay Aadmi Bjaa e Khud Ik Mehshar e Khayaal

ham Anuman Samajhtay Hen Khalwat Hi Kiun Na Ho

Hangaama e Zabooni Himmat Hay Infeaal

Hasil Na Kijiay Dehr Say Ibrat Hi Kiun Na Ho

Waarastgi Bahaana e Begaanagi Nahen

Apnay Say kar Na Ghair Say, Wehshat Hi Kiun Na Ho

Mitta Hay Faot e Fursat e Hasti ka Gham Koi

Umr e Aziz Sarf e Ibaadat Hi Kiun Na Ho

Uss Fitna Khu k Dar Say ab Uthtah nahen ASAD

Iss  Men Hamaaray Sar Pe Qayaamayt Hi Kiun Na Ho

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -