قفس میں ہوں گر اچّھا بھی نہ جانیں میرے شیون کو

قفس میں ہوں گر اچّھا بھی نہ جانیں میرے شیون کو
قفس میں ہوں گر اچّھا بھی نہ جانیں میرے شیون کو

  

قفس میں ہوں گر اچّھا بھی نہ جانیں میرے شیون کو

مرا ہونا برا کیا ہے نوا سنجانِ گلشن کو

نہیں گر ہمدمی آساں، نہ ہو، یہ رشک کیا کم ہے

نہ دی ہوتی خدا یا آرزوئے دوست، دشمن کو

نہ نکلا آنکھ سے تیری اک آنسو اس جراحت پر

کیا سینے میں جس نے خوں چکاں مژگانِ سوزن کو

خدا شرمائے ہاتھوں کو کہ رکھتے ہیں کشاکش میں

کبھی میرے گریباں کو کبھی جاناں کے دامن کو

ابھی ہم قتل گہ کا دیکھنا آساں سمجھتے ہیں

نہیں دیکھا شناور جوئے خوں میں تیرے توسن کو

ہوا چرچا جو میرے پاؤں کی زنجیر بننے کا

کیا بیتاب کاں میں جنبشِ جوہر نے آہن کو

خوشی کیا، کھیت پر میرے، اگر سو بار ابر آوے

سمجھتا ہوں کہ ڈھونڈے ہے ابھی سے برق خرمن کو

وفاداری بہ شرطِ استواری اصلِ ایماں ہے

مَرے بت خانے میں تو کعبے میں گاڑو برہمن کو

شہادت تھی مری قسمت میں ، جو تھی یہ خو مجھ کو

جہاں تلوار کو دیکھا جھکا دیتا گردن کو

نہ لٹتا دن کو تو کب رات کو یوں بے خبر سوتا

رہا کھٹکا نہ چوری کا دعا دیتا ہوں رہزن کو

سخن کیا کہ نہیں سکتے کہ جو یا ہون جواہر کے

جگر کیا ہم نہیں رکھتے کہ کھو دیں جاکے معدن کو

مرے شاہِ سلیماں جاہ سے نسبت نہیں غالب

فریدون و جم و کیخسر و داراب و بہمن کو

شاعر: مرزا غالب

Qafas  Men Hun gar Acha Bhi na jaanen Meray Shiwan Ko

Mira Hona Bura  Kaya HayNawaa Sanjaan e Gulshan Ko

Nahen Gar Hamdami Aasaan na Ho Yeh Rashk  Kaya Kam Hay

Na Di Hoti Khudaaya Aarzu e Dost Dushman Ko

na Nikla Aankh Say Trei Ik Aansu Uss Jaraahat Par

Kia Seenay Men Jiss Nay Khoonchkaan Mizzgaan e Sozan Ko

Abhi Ham Qatl Gah Ka Dekhna Aasaan Samajhtay Hen

nahen Dekha Sahnaawar Hwbay Khoon Men Teray Tosan Ko

Hua Charcha Jo Meray Paano  Ki Zangeer Bannay Ka

Kaya bay Taab Kaan Hen Junbash e Johar Nay Aahan Ko

Khushi Kaya Khait Par Meray Agar So Baar Abr Aaway

Samajhta Hun Hun Keh Dhoondtay Hay Abhi Say Barq   Khirman Ko

Wafa Daari Bashart e Ustawaari Asl e Emaan Hay

Maray But Khaanay Men To Kaabay Men Gaarrho Barehman Ko

Shahaadat Thi Miri Qismat Men Jo Di Thi Yeh Khu Mujh Ko

Jahaan Talwaar Ko Dekha, Jhuka Deta Tha Gardan Ko

Na Lutta Din Ko To Kab Raat Ko Yun Bekhabar Sota

raha Khatka na Chori Ka ,Dua Deta Hun Rehzan Ko

Sukhan Kaya Keh Nahen Saktay Keh Jo yaa Hon Jawaadir K 

Nigar Kaya Ham Nahen Rakhtay Keh Kho Den Ja K Maadan Ko

Miray Shah Sulaeman Jaah Say Nisbat Nahen GHALIB

Fareedon o Jam o Kesar o Daraab o Behman Ko

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -