واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو

واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو
واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو

  

واں پہنچ کر جو غش آتا پئے ہم ہے ہم کو

صد رہ آہنگِ زمیں بوسِ قدم ہے ہم کو

دل کو میں اور مجھے دل محوِ وفا رکھتا ہے

کس قدر ذوقِ گرفتاریِ ہم ہے ہم کو

ضعف سے نقشِ پئے مور، ہے طوقِ گردن

ترے کوچے سے کہاں طاقتِ رم ہے ہم کو

جان کر کیجے تغافل کہ کچھ امّید بھی ہو

یہ نگاہِ غلط انداز تو سَم ہے ہم کو

رشکِ ہم طرحی و دردِ اثرِ بانگِ حزیں

نالۂ مرغِ سحر تیغِ دو دم ہے ہم کو

سر اڑانے کے جو وعدے کو مکرّر چاہا

ہنس کے بولے کہ "ترے سر کی قسم ہے ہم کو!"

دل کے خوں کرنے کی کیا وجہ؟ ولیکن ناچار

پاسِ بے رونقیِ دیدہ اہم ہے ہم کو

تم وہ نازک کہ خموشی کو فغاں کہتے ہو

ہم وہ عاجز کہ تغافل بھی ستم ہے ہم کو

مقطعِ سلسلۂ شوق نہیں ہے یہ شہر

عزمِ سیرِ نجف و طوفِ حرم ہے ہم کو

لیے جاتی ہے کہیں ایک توقّع غالبؔ

جادۂ رہ کششِ کافِ کرم ہے ہم کو

شاعر: مرزا غالب

Waan Pahunch Kar Jo Ghash Aata paey Ham Hay Ham Ko

Sad Reh Aahang e Zameen Bos e Qadam Hay Ham Ko

Dil Ko Main Aor Mujhay Dil Mehv e Waf  Rakhta Hay

Kiss qadar Zoq e Giraftaari e Ham Hay Ham Ko

Zoaf Say naqsh e paey Mor hay Taoq e Gardan

Teray Koochay Say Kahan taaqat e Ram Hay Ham Ko

jaan Kar Kijiay taghaafull Keh Kuch Ummed Bhi Ho

Yeh Nigaah e Ghalat Andaaz To Sam Hay Ham Ko

Rashk e Ham tarhi o Dard e Asar Baang e hazeen

Nala e Murgh e Sahar , Taigh o Dam Hay Ham Ko

Sar Urraanay K Jo Waaday Ko Mukarrar Chaaha

Hans K Bolay Keh Tiray Sar Ki Qasam Hay Ham Ko

Dil K Khoon Karnay Ki Kaya Waja Walekin Na Chaar 

Paas e Beronaqi e Deeda Aham Hay Ham Ko

Tum Wo Nazuk Keh Khamoshi Ko Fughaan Kehtay Ho

Ham Wo Aajiz Keh Taghaafull Bhi Sitam  Hay Ham Ko

Maqta e Silsila e Shoq Nahen Hay Yeh Shehr 

Azm Sair e Najaf o Taof e Haram Hay Ham Ko

Liay Jaati Hay Kahen , Aik Tawaqqo, GHALIB

Jaada e Reh Kashash e Kaaf e Karam Hay Ham Ko

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -