گئی وہ بات کہ ہو گفتگو تو کیوں کر ہو

گئی وہ بات کہ ہو گفتگو تو کیوں کر ہو
گئی وہ بات کہ ہو گفتگو تو کیوں کر ہو

  

گئی وہ بات کہ ہو گفتگو تو کیوں کر ہو

کہے سے کچھ نہ ہوا، پھر کہو تو کیوں کر ہو

ہمارے ذہن میں اس فکر کا ہے نام وصال

کہ گر نہ ہو تو کہاں جائیں؟ ہو تو کیوں کر ہو

ادب ہے اور یہی کشمکش، تو کیا کیجے

حیا ہے اور یہی گومگو تو کیوں کر ہو

تمہیں کہو کہ گزارا صنم پرستوں کا

بتوں کی ہو اگر ایسی ہی خو تو کیوں کر ہو

الجھتے ہو تم اگر دیکھتے ہو آئینہ

جو تم سے شہر میں ہوں ایک دو تو کیوں کر ہو

جسے نصیب ہو روزِ سیاہ میرا سا

وہ شخص دن نہ کہے رات کو تو کیوں کر ہو

ہمیں پھر ان سے امید، اور انہیں ہماری قدر

ہماری بات ہی پوچھیں نہ وو تو کیوں کر ہو

غلط نہ تھا ہمیں خط پر گماں تسلّی کا

نہ مانے دیدۂ دیدار جو، تو کیوں کر ہو

بتاؤ اس مژہ کو دیکھ کر کہ مجھ کو قرار

یہ نیش ہو رگِ جاں میں فِرو تو کیوں کر ہو

مجھے جنوں نہیں غالبؔ ولے بہ قولِ حضور

فراقِ یار میں تسکین ہو تو کیوں کر ہو

شاعر: مرزا غالب

Gai Wo Baat Keh Ho Guftagu To Kiun Kar Ho

Kahay Say Kuch Na Ho,Phir Kaho To Kiun Kar Ho

Hamaaray Zehn Men Iss Fikr Ka Hay Naam Vissal

Keh Gar Na Ho, To Kahan Jaaen, Ho To Kiun Kar Ho

Adab Hay  Aor Yahi  Kashmakash To Kaya Kijiay

Haya  Hay Aor Yahi Gu Magu To Kiun Kar Ho

Tumhen Kaho Keh Guzaara Sanam Paraston Ka

Buton Ki Ho Agar Aisi Hi Kho To Kiun Kar Ho

Ulajhtay Ho Tum , Gar Dekhtay Ho Aaina

Jo Tum Say Shehr Men Hon Aik Do, To Kiun Kar Ho

Jisay Naseeb Ho Roz e Sayaah Mera Sa

Wo Shakhs Din Na Kahay Raat Ko To Kiun Kar Ho

Hamen Phir Un Say Umeed Aor Unhen Hmaari Qadr

Hamaari Baat Hi Poochen Na Do,To Kiun Kar Ho

Ghalat Tha Hamen Khat Par Gumaan Tasalli Ka

Na Maanay Deeda e Deedaar Ho To Kiun Kar Ho

Bataao, Uss Muzza Ko Dekh Kar Keh Mujh Ko Qaraar

Yeh Nesh Ho Rag e Jaan  Men Faro, To Kiun Kar Ho

Mujahy junoo Nahen, GHALIB Walay Ba Qol e Huzoor

Firaaq e Yaar Men Taskeen Ho To Kiun Kar Ho

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -