کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو
کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو

  

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو

نہ ہو جب دل ہی سینے میں تو پھر منہ میں زباں کیوں ہو

وہ اپنی خو نہ چھوڑیں گے ہم اپنی وضع کیوں چھوڑیں

سبک سر بن کے کیا پوچھیں کہ ہم سے سر گراں کیوں ہو

کِیا غم خوار نے رسوا، لگے آگ اس محبّت کو

نہ لاوے تاب جو غم کی، وہ میرا راز داں کیوں ہو

وفا کیسی کہاں کا عشق جب سر پھوڑنا ٹھہرا

تو پھر اے سنگ دل تیرا ہی سنگِ آستاں کیوں ہو

قفس میں مجھ سے رودادِ چمن کہتے نہ ڈر ہمدم

گری ہے جس پہ کل بجلی وہ میرا آشیاں کیوں ہو

یہ کہہ سکتے ہو "ہم دل میں نہیں ہیں" پر یہ بتلاؤ

کہ جب دل میں تمہیں تم ہو تو آنکھوں سے نہاں کیوں ہو

غلط ہے جذبِ دل کا شکوہ دیکھو جرم کس کا ہے

نہ کھینچو گر تم اپنے کو، کشاکش درمیاں کیوں ہو

یہ فتنہ آدمی کی خانہ ویرانی کو کیا کم ہے

ہوئے تم دوست جس کے، دشمن اس کا آسماں کیوں ہو

یہی ہے آزمانا تو ستانا کس کو کہتے ہیں

عدو کے ہو لیے جب تم تو میرا امتحاں کیوں ہو

کہا تم نے کہ کیوں ہو غیر کے ملنے میں رسوائی

بجا کہتے ہو، سچ کہتے ہو، پھر کہیو کہ ہاں کیوں ہو

نکالا چاہتا ہے کام کیا طعنوں سے تُو غالبؔ

ترے بے مہر کہنے سے وہ تجھ پر مہرباں کیوں ہو

شاعر: مرزا غالب

Kisi Ko Day K Dil Koi Nawaa Sanj e Fughaan Kiun Ho

Na ho  Jab Dil Hi Seenay Men To Phir Munh Men Zubaan Kiun Ho

Wo Apni Khu Na Chorren Gay Ham Apni Wazaa Kiun Badlen

Subak Sar Ban KKaya Pochen Keh Ham Say Sar Giraan Kiun Ho

KiaGham Khaar Nay Ruswa lagay Aag Iss Muhabbat Ko

Na Laway Taab Jo Gham KiWo Mera Raazdaan kiun Ho

Wafa Kaisi KahaN Ka Eshq Jab Sar Phorrna Thehra

To phir Ay Sang e Dil Tera Hi Aastaan Kiun Ho

Qafass Men Mujh Say Rudaad e Chaman Kehtay Na Dar Hamdam

Giri Hay Jiss Pe Kal Bijli Wo Mera Aashyaan Kiun Ho

Yeh Keh Saktay Hoham DilMen Nahen henPar Yeh batlaao

Keh Jab Dil Men Tumhi Tum HoAankhon Say Nihaan Kiun Ho

Ghalat Hay Jazb e Dil Ka Shikwa Dekho Jurm Kiss Ka Hay

Na Khaincho Gar Tum  Apnay Kashakash Darmayaan Kiun Ho

Yeh Fitna Aadmi Ki Khaana e Veeraani Ko kaya Kam Hay

Huay Tum Dost Jiss K Dushman Uss Ka Aasmaan  Kiun Ho

yahi Hay Aazmaana To Sataana Kiss Ko Kehtay Hen

Adu K Ho Liay Jab Tum, To Mera Imtehaan Kiun Ho

Kaha Tum Nay Keh Kiun Ho Ghair K Milnay Men Ruswaai

Baja Kehtay Ho, Sach Kehtay Ho, Phir Kahio Keh Haan, Kiun Ho

Nikaala Chaahta Hay Kaam Kaya Taanon Say To GHALIB

Tiray Be Mehr Kehnay Say Wo Tujh Par Mehrbaan Kiun Ho

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -