رہیے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو

رہیے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو
رہیے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو

  

رہیے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو

ہم سخن کوئی نہ ہو اور ہم زباں کوئی نہ ہو

بے درودیوار سا اک گھر بنایا چاہیے

کوئی ہمسایہ نہ ہو اور پاسباں کوئی نہ ہو

پڑیے گر بیمارتو کوئی نہ ہو تیماردار

اور اگر مر جائیے تو نوحہ خواں کوئی نہ ہو

شاعر: مرزا غالب

Rahiay Ab Aisi Jagah Chall Kar Jahan Koi Na Ho

Ham Sukhan Koi Na ,Ham Zubaan Koi NA Ho

Be Dar o DEwaar Sa Saaya Ik Ghar Banaaya Chaahiay

Koi HamSaaya Na Ho Aor Paasbaan Koi Na Ho

Parriay Gar Bemaar To Koi Na Ho Temaardaar

Aor  Gar Mar Jaaiay To Noha Khaan Koi Na HO

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -