صد جلوہ رو بہ رو ہے جو مژگاں اٹھائیے

صد جلوہ رو بہ رو ہے جو مژگاں اٹھائیے
صد جلوہ رو بہ رو ہے جو مژگاں اٹھائیے

  

صد جلوہ رو بہ رو ہے جو مژگاں اٹھائیے

طاقت کہاں کہ دید کا احساں اٹھائیے

ہے سنگ پر براتِ معاشِ جنونِ عشق

یعنی ہنوز منّتِ طفلاں اٹھائیے

دیوار بارِ منّتِ مزدور سے ہے خم

اے خانماں خراب نہ احساں اٹھائیے

یا میرے زخمِ رشک کو رسوا نہ کیجیے

یا پردۂ تبسّمِ پنہاں اٹھائی

شاعر: مرزا غالب

Sad Jalwa Rubaru Hay Jo Mizzgaan Uthaaiay

Taaqat Kahan Keh Deed Ka Ehsaan Uthaaiay 

hay Sang Par Baraat e Muaash e Junoon e Eshq

Yaani Hunooz Minnat e Tiflaan Uthaaiay

Dewaar, Bar e Minnat Mzdoor Say Hay Kham

Ay Khaanuma Kharaab Na Ehsaan Uthaaiay

Ya Meray Zakhm e Rashk Ko Ruswa  Na Kijaiay

Ya Parda e Tabassum e Mizzgaan Uthaaiay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -